Reasons for Declining Quality of Education for LAT and USAT

There are many reasons why our education quality is declining day by day. Some of them have been given in this essay. You will find an Essay on “Reasons for Declining Quality of Education” for LAT and USAT examinations. In the LAT and USAT examinations, you can write essays in Urdu and English. So we have arranged both versions here.

Essay on “Reasons for Declining Quality of Education” (English Version)

History is a witness that our forefathers achieved great achievements in the field of knowledge and in the field of knowledge, whether it is history or geography or science, whether it is mathematics or botany, philosophy or logic, literature or linguistics, medicine or sociology, Be it architecture or fine arts, they achieved a position through their great efforts and research that the West felt proud to imitate, but today we have distanced ourselves from the achievements of our ancestors and are wandering in imitation of the West.

The people of the West have gained a lot from the achievements of our ancestors and nowadays they are called Mir Caravans. And we have been left backward in terms of academic skills, so is our quality in the field of education also getting lower and lower.

Waris Sirhandi, while reviewing the causes of the “degradation of quality education in Pakistan” has written in the Journal of Knowledge and Knowledge:

“In my view, the root of all evil is that we have deviated from the right ideal. Obviously, unless the objective is correct, the destination cannot be found, only in the light of the correct objective, the destination can be determined”.

Dr. Abdus Salam Khurshid wrote in his article “Degradation of Higher Education in Pakistan” in the same magazine

The system of education inherited from the British did not have a higher purpose but was a reflection of the specific traditions of the two foreign rajs.

Our leaders of public opinion here have consistently and repeatedly pointed out the direction, and purpose and demanded to change the structure. But the tragedy was that positive and clear proposals were not presented, so this useful discussion became a victim of sloganeering and obviously, slogans cannot create a new revolutionary education system.

Therefore, several educational commissions were established. He also made recommendations, but as a result of these recommendations, there were some modifications and some reversals, and the education system still remained the same thus it is not a mirror of the aspirations of the nation and is unable to meet the demands of the nation. Expects it.

The curriculum that has been laid down for the elementary grades to the higher grades has been more weighty but less useful. Sometimes the subjects have been exaggerated, sometimes they have been reduced, sometimes the course has been made two years, sometimes three years. Sometimes English education was followed but the American style of education was followed.

According to this, the curriculum and textbooks were prepared which did not prove to be very useful for Pakistani students. So the books for students are preferred to be published by the syllabus board established by the government. Students can no longer study well.

Because the exam paper is made from the textbook itself. Instead of getting an education, the eyes of the students were focused on writing textbooks. The work of teachers has also become more about completing courses and finishing textbooks rather than imparting more education. This harmed all the students.

An allegation regarding the decline in the quality of education is also made that the teachers who are the quality of the learners are not selected in the right ways. Therefore, when there are no proper teachers, God is the guardian of the learned.

The position of teachers’ associations is that the government has created so many problems for teachers that they do not get a chance to focus on teaching. Parents say that teachers are not performing their duties well. The result of all this is that the students go to school with weight but come back empty-headed and then seek help from tuition and coaching centers.

One of the shortcomings of the education system is that the academic year is getting shorter and shorter ie it is 120 to 150 days while there are 365 days in a year. A student can study for 100 more days every year. Most of the time is spent on maintaining the exam and examination schedules and not on the completion of the academic syllabus and the completion of the academic session.

The examination system is also a part of the education system. The system of examinations is the same as that practiced by the British. There is an exam at the end of the year with a few questions. Whoever gives good answers to these specific questions will be an intelligent and high-ranking student.

To pass these exams, students resort to illegal means such as copying and sometimes bullying to copy. Threats are also used. Some teachers are accused of copying by taking money. In some centers, teachers do not give duty at all. Center supervisors, supervisors are recruited from outside and these supervisors are arbitrary.

The problem of language is also playing an important role in the deterioration of the quality of education. English has loomed over our education system like an ox bell and is sucking the lifeblood of our young students. Education goes from 6th standard to BA. But the student is not able to give his apology either in writing or verbally in the English language when he should be at the matriculation level to do so.

Political parties have opened their branches in educational institutions for some time. Therefore, these parties continue to influence young students and they cannot focus their full attention on education.

Inspection of educational institutions has been done so both students and teachers are masters of their own destinies. Do what you want, but the education officers sit in the offices and keep correcting the qibla of education. The education boards and universities are also mostly interested in conducting the examinations. They don’t care if the curriculum is completed or not.

Measures to Promote Education in Pakistan

The government has opened seminaries, schools, and colleges for the promotion of education, but if we look at the educational statistics, it is known that the number of educated men is barely ten percent and not even one percent of women. How can the inhabitants of a country where 90% of men and 99% of women are illiterate be called educated?

The reason for this sad lack of education is that ninety-five percent of the population of Pakistan lives in villages, the majority of the villagers are farmers who do agriculture, and the rest help the farmers in one way or another and they also do the same.

Participating in the produce of the land which the farmer sows, plows, smoothing the land by turning the plow and seeding, no special need for education is felt. In the environment in which the farmer’s child opens his eyes, he learns these things by himself.

Therefore, if a farmer is told that Chaudhary! Why don’t you send your sons to madrassas, he usually replies, Babuji! What job do we have to do to waste children’s lives by sending them from orbit?

When we consider this type of situation, we come to the conclusion that the madrasas opened by the government cannot spread education. It also needs some other motivation. Therefore, we believe that it is very important to take the following measures for educational development in Pakistan.

Adult Education

Education of older men and women should be arranged. Night madrassas or night schools should be opened in every city, town, or village. Allowance should be given to the teachers working in them and free work should not be taken from them. Elderly people should be taught for one or two hours at night.

Establishment of Girls’ Schools

Girls’ schools are very few in Pakistan. If you go around the rural population, you can see a primary school for the people somewhere every three or four villages, but girls’ madrassas are not seen anywhere in the villages. Just as primary education should be declared compulsory and mandatory for people, primary education should also be declared compulsory for Kolar.

Compulsory Primary Education Act

Primary education should be made compulsory for all. The government should make law according to which every child from the age of five to eleven years should study in some madrasa and the violators of this law should be punished in the same way with imprisonment or Penalty shall be imposed in the same manner as punishment for violation of other laws.

Free Educational Facilities

Some people object that how to teaching children. From where to get rupees to buy books and pay fees. We hardly get two meals a day. This objection is very valid. The government should not charge any fee in primary schools but should give books, pencils, pens, medicines, slates, etc. free of cost to the poor students so that they can study happily.

Salary Increase

Scholarships should be given to meritorious students on completion of primary education. The number of these scholarships should be increased. Many talented and poor students cannot continue their education simply because of a lack of funds. Gifted children should be encouraged enough, Pakistani nobles should lend a hand to the government in this work and many scholarships should be provided by nobles and merchants.

Voting Eligibility

An ignorant person should not be allowed to vote during elections. A limit should be set. For example, it should be decided that only those who pass the primary can vote. This can also establish and clarify the importance of education.

Duties of Village Numdar and Patwari

The number day and patwari of every village should support the village madrasa and give him an opportunity to educate the people from time to time about the benefits of education and the harms of ignorance.

Low Jobs and Primary Education

Even for small jobs, the condition of primary pass should be imposed, that is, no uneducated peon, financial and watchman should be recruited. This can lead to more education.

Duties of Officers

Finally, it is important to say that there is a need for dedication and diligence among the responsible officers of Pakistan, if they insist on the people for continuous education, then there is no reason why every corner of Pakistan should not be enlightened with new education.

Contribution of Newspapers to the Promotion of Democracy

Akhbar is the plural form of the Arabic word Khabar. But is used singularly in Urdu and refers to a collection of news published daily or weekly. Therefore, newspapers are not a collection of news, but a collection of newspapers.

Nothing can be definitively said about where and when the existence of the newspaper was first implemented in the world, but there is a trace of the Peking Gazette in China for more than three thousand years, which is the oldest newspaper in the world. It was claimed to be.

We do not have a debate about the validity of this claim, but what is clearly revealed to us from this historical fact is that even in ancient times, the need for a newspaper was felt.

Although in that era, the newspaper did not have the place in the development of human civilization and the life of ordinary people that it has today, because in those days the press had not yet come into being and without the press, the newspaper had no connection with public life. It is impossible to be born.

In fact, before the modern industrial age, which originated from European countries, the people did not have any interference in the national interests, but rather it was a matter of Khusrawan and Nand.

Then there was no clear concept of national life. Even the smallest country was divided into small units in the absence of messengers and newspapers and these small villages and towns were engrossed in their own situation. No one knew about each other.

Yes, if a tourist or a merchant ever reached an area, understand that the people there got access to the newspaper on the go. Apart from this, during the feudal or imperial regime, from which the present industrial age has been born, there was no question of the rights of the people, and these rights were not recognized under any constitution.

So, when industrial life started to develop in the countries of Europe and the concepts of national life started to emerge, the newspapers also started to emerge, and gradually the newspapers started to play a significant role in the new economic system and the new organization of the society.

He became the spokesman and pioneer of this revolution which more or less engulfed the whole world.

Today, in the latter half of the 21st century, when we have entered the amazing era of space conquest and the discovery of nuclear energy, the simultaneous development, and destruction of human civilization have provided such tremendous and vast opportunities that are imaginable.

The man of ancient times could not do what the man of a century or two ago could do. Newspapers have achieved such an important place in the development and survival of human civilization that its precedent cannot be found.

Basically, this characteristic of a newspaper that it is a collection of news is still established today, so every day when we pick up the newspaper in the morning, we impatiently look at its headlines and thick headlines and feel this feeling of ours. Satisfy the curiosity to see what important events have happened in our country and other countries today.

Therefore, it is necessary for a good and beloved newspaper to provide us with the maximum number of domestic and foreign news and information and present them to us in such a way that we understand the importance of each piece of news. But let it be clear and let us know its important aspects, but still, a newspaper is not just a collection of news, there is much more to it.

The most important part of any newspaper is its editorial which is also called a leading article and contains comments on domestic or foreign issues and issues because leading articles or such articles are the mirrors of any newspaper policy and the newspaper itself.

They awaken the public opinion from their own point of view about national and international issues and matters and help in its construction and formation, and this thing has become obvious and clear as day.

Without an organized public opinion today, no nation, whether small or big, can neither dream of development and prosperity, can it protect its freedom and security, nor can it solve the small and big tangled issues of the world. There can be hope. This is the reason why any intelligent reader of the newspaper cannot go without reading this section of the newspaper.

Another important part of newspapers consists of the letters column in a good newspaper where letters are printed regarding certain complaints which are considered necessary to bring to the attention of the local authorities or any department of the government.

There, intelligent readers of the newspaper express their opinion about some important social, social, political, national, and international issues and issues or want to draw the attention of the general public towards them.

Therefore, the thoughts of such people also play an important role in the promotion of democratic life. It happens that a reader raises an important but controversial issue and the editor of the newspaper invites his readers to express their views with the publication of this letter.

So that the opinions of as many people as possible can be known on this issue and the views of people with different ideas about it can be exposed.

Apart from this, the news about the world’s trade fluctuations and the latest prices of foreign markets and similar useful information is also published in the newspapers so that the businessmen of the country are fully informed. Similarly, a section of the newspaper is dedicated to sports, etc., so that common people can keep familiar with the achievements of national teams and athletes in this field, and sports fans, especially, can satisfy their tastes.

Some newspapers also publish academic literary editions of newspapers periodically or on fixed days so that the literary taste of the public continues to be developed and satisfied. Apart from this, good newspapers also publish satirical and humorous cartoons. Color represents a particular issue or person to us.

These cartoons also sometimes do what a large paper or article can’t. In this way, we also have a juridical column in Urdu newspapers. In which opinion is sometimes given on big issues in a light-hearted manner.

These Faqahiya columns, which burn the reader’s mind, also provide him with the equipment of his nature. Briefly, the increasing popularity of newspapers in the present era throughout the world provides proof that newspapers and democracy are inseparable.

Without the existence of newspapers, the development of democracy and the development of human civilization are not possible. After independence in our own country, the number and publication of newspapers are increasing day by day and this is auspicious for us.

Essay on “Reasons for Declining Quality of Education” (Urdu Version)

معیار تعلیم کی پستی کے اسباب

تاریخ شاہد ہے کہ ہمارے اسلاف نے علمی میدان میں بڑی بڑی کامیابیاں حاصل کیں اور شعبہ علم میں چاہے وہ تاریخ وسیرت ہو یا جغرافیہ و ہیت چاہے وہ ریاضی ہو یا نباتیات، فلسفہ ہو یا منطق ، ادب ہو یا لسانیات، طب ہو یا عمرانیات، تعمیرات ہو یا فنون لطیفہ انھوں نے اپنی انتہائی کوششوں اور تحقیق کے ذریعے وہ مقام حاصل کیا کہ مغرب نے اس کی تقلید کرتے ہوئے فخر محسوس کیا

لیکن آج ہم اپنے اسلاف کے کارناموں سے خود کنارہ کش ہو گئے ہیں اور مغرب کی تقلید میں سرگرداں ہیں ۔ ہمارے اسلاف کے کارناموں سے اہل مغرب نے بہت کچھ حاصل کر لیا اور دور حاضر میں وہ میر کارواں کہلاتے ہیں ۔ اور ہم پسماندہ ہوکر رہ گئے ہیں علمی مہارت تو کیا تعلیمی میدان میں بھی ہمارا معیار پست سے پست تر ہوتا جارہا ہے۔

 وارث سرہندی نے ‘‘پاکستان میں معیارتعلیم کا انحطاط ’’کے اسباب کا جائزہ لیتے ہوۓ مجلہ علم و آگہی میں تحریر کیا ہے:

‘‘میری نظر میں تمام خرابیوں کی اصل یہ ہے کہ ہم صحیح نصب العین سے ہٹ گئے ہیں۔ ظاہر ہے جب تک نصب العین صحیح نہ ہو منزل نہیں مل سکتی صحیح نصب العین کی روشنی ہی میں منزل کا تعین ہوسکتا ہے۔’’

 ڈاکٹر عبدالسلام خورشید  نے اسی مجلہ میں اپنے مضمون‘‘پاکستان میں ا علیٰ تعلیم کا انحطاط’’ میں لکھا ہے کہ

” انگریز سے ورثے میں پایا ہوا نظام تعلیم کسی اعلیٰ مقصد کا حامل نہیں تھا بل کہ دو اجنبی راج کی مخصوص روایات کا عکاس تھا۔ اس پر ہمارے یہاں کی رائے عامہ کے رہنماؤں نے تسلسل اور تواتر کے ساتھ نکتہ چینی کی اور سمت ، مقصد اور ڈھانچہ بدلنے کا مطالبہ کیا۔ لیکن المیہ یہ تھا کہ مثبت اور واضح تجاویز پیش نہیں کی گئیں اس لیے یہ مفید بحث نعرہ زنی کا شکار بن گئی اور ظاہر ہے نعروں سے کوئی نیا انقلابی نظام تعلیم نہیں بن سکتا۔’’

لہذا ہوا یہ کہ متعدد تعلیمی کمیشن قائم ہوئے ۔ انھوں نے سفارشات بھی پیش کیں لیکن ان سفارشات کے نتیجے میں کچھ ترامیم ہوئیں کچھ الٹ پلٹ ہوئی اور نظام تعلیم پھر بھی وہی کا وہی رہا اور اس طرح وہ قوم کی امنگوں کا آئینہ دارنہیں اور ان تقاضوں کو پورا کرنے سے قاصر ہے جس کی قوم اس سے توقع کرتی ہے۔ ابتدائی جماعتوں سے اعلیٰ جماعتوں تک کے لیے جو نصاب تعلیم مرتب کیا گیا ہے

وہ وزنی زیادہ رہا ہے لیکن فائدہ مند کم ۔کبھی مضامین کی افراط کر دی گئی کبھی ان میں کمی کر دی گئی کبھی کورس دو سال کا کر دیا گیا کبھی تین سال کا کبھی انگریزی تعلیم ی تقلید کو ملحوظ رکھا گیاک بھی امریکی طرز تعلیم کی پیروی کی گئی ۔ اس کے مطابق نصاب اور کتا بیں تیار کی گئیں جو پاکستانی طلبہ کے لیے زیادہ مفید ثابت نہیں ہوئیں نصاب اور نصابی کتابوں کی تیاری کا پورا کام حکومت نے خود سنبھال لیا ۔

لہذا طالب علموں کے لیے دہی کتابیں پسند کیں جو حکومت کے قائم کردہ نصابی بورڈ شائع کر یں۔ طالب علم اب اچھی  سے اچھی کتا بیں نہیں پڑھ سکتے ۔ اس لیے کہ امتحان کا پرچہ نصابی کتاب ہی سے بنتا ہے۔ طالب علموں کی نگاہیں بجائے تعلیم حاصل کرنے کے نصابی کتب رٹنے پر مرکوز ہوگئیں ۔ اساتذہ کرام کا کام بھی کورس مکمل کرنا اور نصابی کتب ختم کرانا زیادہ ہو گیا نہ کہ زیادہ زیادہ تعلیم فراہم کرنا۔ اس سے من جملہ طالب علموں کو نقصان پہنچا۔

معیار تعلیم کی پستی کے سلسلے میں ایک الزام یہ بھی لگایا جا تا ہے کہ اساتذہ جو کہ متعلموں کے معیار ہیں ان کا انتخاب ہی صحیح طریقوں پر نہیں ہوتا۔ الٰہذا جب صحیح اساتذہ نہ ہوں تو متعلموں کا خدا ہی حافظ ہے۔ اساتذہ انجمنوں کا مؤقف یہ ہے کہ اساتذہ کے لیے حکومت نے اس قدر مسائل پیدا کر رکھے ہیں کہ ان کو تدریس پر توجہ دینے کا موقع ہی نہیں ملتا۔ والدین کا کہنا ہے کہ اساتذہ اپنے فرائض کوبہ احسن انجام نہیں دے رہے ہیں ۔ اس سب کا نتیجہ یہ ہے کہ طالب علم اپنے سکول بستے تو وزنی لے کر جاتے ہیں لیکن وہاں سے واپس خالی الذہن آتے ہیں اور پھر ٹیوشن اور کوچنگ سنٹر کا سہارا تلاش کرتے ہیں ۔

 نظام تعلیم کی خامیوں میں سے ایک یہ بھی ہے کہ تعلیمی سال مختصر سے مختصر ہوتا جا رہا ہے یعنی یہ 120 تا 150 دن کا ہے جب کہ سال میں 365 دن ہوتے ہیں۔ ہر سال میں طالب علم مزید 100 دن تعلیم حاصل کر سکتا ہے۔ زیادہ تر وقت امتحان اور امتحان کے نظام الاوقات برقرار رکھنے پر دیا جاتا ہے تعلیمی نصاب کی تکمیل اور تعلیمی سیشن کی تکمیل پر نہیں ۔

نظام امتحانات بھی نظام تعلیم کا حصہ ہے ۔ نظام امتحانات وہی ہے جو انگریزوں نے رائج کیا تھا۔ سال کے آخر میں امتحان ہوتا ہے چند سوالات ہوتے ہیں۔ ان مخصوص سوالات کے جو بھی جس طرح بھی اچھے جواب دے دے وہ ذہین اور اعلی درجہ کا طالب علم ٹھہرتا ہے ان امتحانات کو پاس کرنے کے لیے طلبہ غیر قانونی ذرائع یعنی نقل وغیرہ کا سہارا بھی لیتے ہیں اور بعض اوقات نقل کرنے کے لیے دھونس دھمکیاں بھی استعمال کرتے ہیں ۔ بعض اساتذہ پر الزام ہے کہ وہ پیسے لے کر نقل کراتے ہیں ۔ بعض مراکز پر اساتذہ ڈیوٹی ہی نہیں دیتے ۔ مرکز کا نگران ،نگران عملہ باہر سے بھرتی کرتے ہیں اور یہ نگران من مانی کرتے ہیں۔

زبان کا مسئلہ بھی معیار تعلیم کے انحطاط میں اہم کردار ادا کر رہا ہے۔ انگریزی ہمارے نظام تعلیم پر آکاس بیل کی طرح چھائی ہوئی ہے اور ہمارے نوجوان طلبہ کی صلاحیتوں کا خون چوس رہی ہے۔ پڑھائی تو درجہ ششم سے بی اے تک جاتی ہے ۔ لیکن طالب علم اپنا مافی الضمیر انگریزی زبان میں لکھ کر اور نہ ہی زبانی ادا کر پا رہا ہے جب کہ اسے ایسا کرنے کے لائق میٹرک کی سطح پر ہی ہو جانا چاہیے۔

کچھ عرصہ سے سیاسی جماعتوں نے اپنی شاخیں تعلیمی اداروں میں بھی کھول دی ہیں ۔ لہذا یہ جماعتیں نو جوان طالب علموں کو متاثر کرتی رہتی ہیں اور ان کی پوری توجہ تعلیم پر مرکوز نہیں ہو پاتی ۔

تعلیمی اداروں کا معاینہ تو یکسرختم ہو گیا ہے لہذا طالب علم اور اساتذہ دونوں اپنی قسمت کے مالک ہیں۔ جو چاہیں کریں مگر تعلیم کے افسران دفتروں میں بیٹھ کر تعلیم کا قبلہ درست کرتے رہتے ہیں ۔تعلیمی بورڈ اور یونی ورسٹیاں بھی زیادہ تر دلچسپی امتحانات کے انعقاد میں لیتی ہیں۔ انھیں اس بات سے کوئی سرد کارنہیں کہ نصاب بھی مکمل ہوا یا کہ نہیں ۔

پاکستان میں فروغ تعلیم کے لیے تدابیر

 حکومت نے فروغ تعلیم کے لیے مدرسے، سکول اور کالج کھول رکھے ہیں لیکن تعلیمی اعداد و شمر پر نظر ڈالیں تو معلوم ہوتا ہے کہ تعلیم یافتہ مردوں کی تعداد بمشکل دس فیصد ہے اور عورتوں کی تو ایک فیصد بھی نہیں۔ جس ملک کے نوے فیصد مرد اور نانوے فیصد عورتیں ان پڑھ ہوں اس ملک کے باشندوں کو تعلیم یافتہ کیسےکہہ سکتے ہیں ۔

 تعلیم کی اس قابل افسوس کی کی وجہ یہ ہے کہ پاکستان کی پچانوے فیصد آبادی دیہات میں زندگی بسر کرتی ہے دیہاتی لوگوں میں اکثریت کسانوں کی ہے جو زراعت کرتے ہیں اور باقی لوگ کسی نہ کسی طریقے سے کسانوں کی مدد کرتے ہیں اور وہ بھی اسی زمین کی پیداوار سے حصہ لیتے ہیں جسے کسان بوتا ہے، ہل جوتنے ، سہا گہ پھیر کر زمین کو ہموار کرنے اور بیچ بونے میں تعلیم کی خاص ضرورت محسوس نہیں کی جاتی ۔

کسان کا بچہ جس ماحول میں آنکھ کھولتا ہے اس میں یہ باتیں از خود سیکھ جاتا ہے ۔ اس لیے اگر کسی کسان کو کہا جائے کہ چودھری! اپنے بیٹوں کو مدرسے کیوں نہیں بھیجتے تو وہ عام طور پر یہ جواب دیتا ہے، بابو جی! ہم نے کونسی نوکری کرنی ہے جو بچوں کو مدار سے بھیج کر ان کی عمر ضائع کر یں۔

 جب اس قسم کے حالات پر غور کرتے ہیں تو اس نتیجہ پر پہنچتے ہیں کہ حکومت کے کھولے ہوئے مدرسے تعلیم نہیں پھیلا سکتے ۔ اس کے لیے کسی اور محرک کی بھی ضرورت ہے۔ اس لیے ہم سمجھتے ہیں کہ پاکستان میں تعلیمی ترقی کے لیے مندرجہ ذیل تدابیر اختیار کرنا از بس ضروری ہے۔

تعلیم بالغاں

بڑی عمر کے مردوں اور عورتوں کی تعلیم کا انتظام کیا جائے ۔ ہر شہری ،قصبہ یا گاؤں میں رات کے مدرسے یا نائٹ سکول کھولے جائیں۔ ان میں کام کرنےوالے مدرسین کو الاؤنس دیا جاۓ اور ان سے مفت کام نہ لیا جائے ۔ بڑی عمر کے لوگوں کو رات کے وقت ایک دو گھنٹے تعلیم دی جاۓ ۔

طالبات کے سکولوں کا قیام

لڑکیوں کے سکول تو پاکستان میں بہت ہی تھوڑے ہیں۔ دیہاتی آبادی کا چکر لگا ئیں تو لوگوں کے لیے پرائمری سکول ہر تین چار گاؤں کے بعد کہیں نہ کہیں نظر آجاتا ہے لیکن لڑکیوں کا مدرسہ تو دیہات میں کہیں نظر ہی نہیں آتا۔ جس طرح ابتدائی تعلیم لوگوں کے لیے جبری اور لازمی قرار دی جائے اس طرح ابتدائی تعلیم کولڑ کیوں کے لیے بھی لازمی قرار دیا جائے ۔

پرائمری تعلیم کا لازمی قانون

پرائمری تعلیم سب کے لیے لازمی قرار دی جائے ۔ حکومت کو چاہیے کہ وہ ایسا قانون بناۓ جس کی رو سے ہر بچہ پانچ سال کی عمر سے گیارہ سال کی عمر تک کسی نہ کسی مدرسے میں پڑھے اور اس قانون کی خلاف ورزی کرنے والوں کی اسی طرح سے قید و بند کی سزا دی جائے یا جرمانہ کیا جاۓ جس طرح سے دوسرےقوانین کی خلاف ورزی پر سزا دی جاتی ہے۔

مفت تعلیمی سہولتیں

بعض لوگ اعتراض کرتے ہیں کہ جی !بچے کیسے پڑھائیں۔ کتابیں خریدنے اور فیس دینے کے لیے روپیہ کہاں سے لائیں ۔ ہمیں تو دو وقت کا کھانا بھی مشکل سے نصیب ہوتا ہے۔ یہ اعتراض بہت حد تک بجا ہے ۔ حکومت کو چاہیے کہ پرائمری سکولوں میں کوئی فیس نہ رکھی جائے بلکہ غریب طالب علموں کی کتابیں پنسلیں قلمیں ، دوائیں اور سلیٹیں وغیرہ بھی بغیر قیمت کے دی جائیں تا کہ وہ خوشی خوشی تعلیم حاصل کر یں ۔

وظائف میں اضافہ

پرائمری تعلیم کے خاتمہ پر ہونہار طالب علموں کو وظائف دیے جا ئیں ۔ ان وظائف کی تعداد زیادہ کر دی جائےکئی ہونہار اور نادار طالب علم محض مالی کمی کی وجہ سے اپنی تعلیم جاری نہیں رکھ سکتے ۔ ہونہار بچوں کی کافی حوصلہ افزائی کرنا چاہیے اس کام میں پاکستانی امرا کوحکومت کا ہاتھ بٹانا چاہیے اور بہت سے وظائف امرا اور تجار کی طرف سے ہونے چاہئیں۔

حق رائے دہی کی اہلیت

جاہل آدمی کو انتخابات کے وقت ووٹ دینے کی اجازت نہ ہو۔ ایک حد مقرر کر دی جائے ۔ مثلا یہ طے کر لیا جائے کہ ووٹ صرف وہی دے سکتا ہے جوپرائمری پاس ہو ۔ اس سے بھی تعلیم کی اہمیت قائم اور واضح ہوسکتی ہے۔

گاؤں کے نمبردار اور پٹواری کا فرض

ہر گاؤں کے نمبردار اور پٹواری کو گاؤں کے مدرس کی مد کرنی چاہیے اور اسے موقع دینا چاہیے کہ وہ وقتا ًفوقتاً تعلیم کے فائدوں اور جہالت کے نقصانات سے لوگوں کو آگاہ کرتا رہے۔

ادنیٰ ملازمتیں اور ابتدائی تعلیم

              چھوٹی چھوٹی ملازمتوں کے لیے بھی پرائمری پاس ہونے کی شرط لگا دی جاۓ یعنی کوئی ان پڑھ آ دی چپڑاسی، مالی اور چوکیداربھی بھرتی نہ کیا جائے ۔ اس سے تعلیم کی طرف زیادہ رجوع ہوسکتا ہے۔

افسران کی فرض شناسی

سب سے آخر میں یہ کہنا ضروری ہے کہ پاکستان کے ذمہ دار افسروں میں ذر اور مستعدی کی ضرورت ہے اگر وہ مسلسل تعلیم کے لیے عوام پر زور دیں تو کوئی وجہ نظر نہیں آتی کہ پاکستان کا گوشہ گوشہ نو رتعلیم سے منور نظر نہ آئے ۔

جمہوریت کے فروغ میں اخبارات کا حصہ

اخبار عربی لفظ خبر کی جمع ہے ۔ مگر اردو میں بطور واحد استعمال ہوتا ہے اور اس سے مراد خبروں کا وہ مجموعہ ہے جو روزانہ یا ہفتہ وار شائع ہو۔ لہذا اخبارات خبرکی جمع الجمع نہیں ہے بلکہ اخبار کی جمع ہے۔

دنیا میں اخبار کا وجود سب سے پہلے کہاں اور کب عمل میں آیا اس سلسلہ میں حتمی طور پر تو کچھ نہیں کہاجا سکتا البتہ چین میں کم و بیش تین ہزار برس بیشتر پیکن گزٹ کا سراغ ملتا ہے جس کے بارے میں دنیا کا قدیم ترین اخبار ہونے کا دعویٰ کیا جاتا تھا ۔

ہمیں یہاں اس دعویٰ کی صحت سے بحث نہیں ہے لیکن اس تاریخی حقیقت سے جو بات واضح طور پر ہمارے سامنے آتی ہے وہ یہ ہے کہ زمانہ قدیم میں بھی اخبار کی ضرورت کو محسوس کیا جاتا تھا ۔ اگر چہ اس زمانہ میں اخبار کو تہذیب انسانی کے فروغ اور عام انسانوں کی زندگی میں وہ مقام حاصل نہیں تھا جو آج اسے میسر ہے کیوں کہ ان دنوں ابھی پریس معرض وجود میں نہیں آیا تھا اور بغیر پر یس کے اخبار کا عوامی زندگی سے تعلق پیدا ہونا ناممکن العمل بات ہے۔

در اصل جدید صنعتی عہد جس کی ابتدا یورپ کے ملکوں سے ہوئی اس سے قبل عوام کو ملکی مفادات میں کچھ دخل نہیں ہوتا تھا بلکہ رموز مملکت خویش خسرواں وانند والا معاملہ ہوتا تھا۔ پھر قومی زندگی کا کوئی واضح تصور بھی موجودنہیں تھا ۔

چھوٹے سے چھوٹا ملک بھی ذرائع رسل و رسائل کی عدم موجودگی میں چھوٹی چھوٹی اکائیوں میں بٹا ہوا تھا اور یہ چھوٹے چھوٹے گاؤں اور قصبے اپنے اپنے حال میں مگن ہوتے تھے ۔ کسی کو ایک دوسرے کی خبر نہیں ہوتی تھی ۔ ہاں اگر کوئی سیاح یا سوداگر کبھی کسی علاقے میں پہنچ گیا تو سمجھ لیجیے وہاں کے لوگوں کو چلتا پھرتا اخبار میسر آ گیا۔

علاوہ از میں جاگیرداری یا شاہی دور حکومت میں جس کی کوکھ سے موجودہ صنعتی عہد نے جنم لیا ہے عوام کے حقوق کا کوئی چر چانہیں تھا اور نہ کسی آئین کے تحت ان حقوق کوتسلیم کیا جا تا تھا۔ چنانچہ یورپ کے ملکوں میں جب صنعتی زندگی نے نشوونما پانا شروع کی اور قومی زندگی کے تصورات ابھرنے لگے تو اخبارات نے بھی سر نکالنا شروع کیا اور رفتہ رفتہ اخبارات نے نئے معاشی نظام اور معاشرہ کی نئی تنظیم کے سلسلہ میں قابل ذکر کردار ادا کرنا شروع کر دیا تھا اس انقلاب کے ترجمان اور علمبردار بن گئے جس نے ساری دنیا کو کم و بیش اپنی لپیٹ میں لے لیا۔

آج اکیسویں صدی کے نصف آخر میں جب کہ ہم خلاء کی تسخیر کے حیرت انگیز عہد میں داخل ہو چکے ہیں اور ایٹمی توانائی کی دریافت نے بیک وقت تہذیب انسانی کی ترقی اور تباہی کے لیے ایسے زبردست اور وسیع مواقع فراہم کر دیے ہیں جن کا تصور زمانہ قدیم کا انسان کیا صدی دوصدی پیشتر کا انسان بھی نہیں کر سکتا تھا۔ اخبارات نے تہذیب انسانی کے فروغ اور بقا میں اس قدر اہم مقام حاصل کر لیا ہے کہ اس کی نظیر نہیں مل سکتی۔

بنیادی طور پر اخبار کی یہ خصوصیت کہ وہ خبروں کا مجموعہ ہوتا ہے آج بھی قائم ہے چناں چہ ہر روز جب ہم علی الصبح اخبار ہاتھ میں لیتے ہیں تو بڑی بے صبری سے اس کی شہ سرخی اور موٹی سرخیوں پر نظر ڈالتے اور اپنے اس جذبہ تجسس کو تسکین دیتے ہیں کہ دیکھیں آج ہمارے ملک اور دوسرے ملکوں میں کون سے اہم واقعات پیش آئے ہیں۔

لہذا اس اعتبار سے ایک اچھے اور ہر دل عزیز  اخبار کے لیے ضروری ہوتا ہے کہ وہ ہمیں زیادہ سے زیادہ تعداد میں ملکی اور غیر ملکی خبر یں اور اطلاعات مہیا کرے اور انھیں اس سلیقے سے ہمارے سامنے پیش کرے کہ ہر خبر کی اہمیت بھی ہم پر پوری طرح واضح ہو جائے اور ہم اس کے اہم پہلوؤں سے واقف بھی ہو جائیں لیکن اس کے باوجود ایک اخبار محض خبروں کا مجموعہ ہی نہیں ہوتا اس میں اور بھی بہت کچھ ہوتا ہے۔

کسی بھی اخبار کا اہم ترین حصہ اس کے ایڈیٹوریل جسے لیڈنگ آرٹیکل بھی کہا جاتا ہے اور ملکی یا غیر ملکی مسائل و معاملات پر تبصروں پر مشتمل ہوتا ہے کیوں کہ لیڈنگ آرٹیکل یا ایسے شذرات ہی کسی اخباری پالیسی کے آئینہ دار ہوتے ہیں اور اخبار انہی کے وسیلے سے قومی اور بین الاقوامی مسائل و معاملات کے بارے میں اپنے اپنے نقطہ نظر سے رائے عامہ کو بیدار کرتے ہیں اور اس کی تعمیر وتشکیل میں ممد و معاون ہوتے ہیں اور یہ چیز تو روز روشن کی طرح عیاں اور مسلمہ حیثیت اختیار کر چکی ہے۔کہ منظم رائے عامہ کے بغیر آج کوئی قوم خواہ چھوٹی ہو یا بڑی نہ تو تعمیر و ترقی اور خوشحالی کے خواب دیکھ سکتی ہے نہ اپنی آزادی اور سلامتی کا تحفظ کر سکتی ہے اور نہ دنیا کے چھوٹے بڑے الجھے ہوئے معاملات کے سلجھنے کی کوئی امید کی جاسکتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اخبار کا کوئی ہوش مند قاری اخبار کے اس حصہ کا مطالعہ کیے بغیر نہیں رہ سکتا۔

اخبارات کا ایک اور اہم حصہ خطوط کے کالم پر مشتمل ہوتا ہے ایک اچھے اخبار میں جہاں بعض ایسی شکایات سے متعلق خطوط چھپتے ہیں جن کے بارے میں مقامی حکام یا حکومت کے کسی محکمہ کی توجہ منعطف کرانا ضروری سمجھا جاتا ہے ۔ وہاں اخبار کے ذہین قارئین بعض اہم معاشرتی، سماجی، سیاسی ،قومی اور بین الاقوامی مسائل و معاملات کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کرتے ہیں یا ان کی طرف عام لوگوں کی توجہ مبذول کرانا چاہتے ہیں۔

چنانچہ جمہوری زندگی کے فروغ میں ایسے لوگوں کے افکار بھی اہم کردار ادا کرتے ہیں یوں ہی ہوتا ہے کہ کسی قاری نے ایک اہم لیکن متنازع مسئلہ چھیڑ دیا اور اخبار کے مدیر نے اس خط کی اشاعت کے ساتھ اپنے قارئین کو اظہار خیال کی دعوت دے دی تا کہ اس مسئلہ پر زیادہ سے زیادہ لوگوں کی آراء کا پتا چل سکے اور اس کے بارے میں مختلف الخیال لوگوں کےنظریات سامنے آ جائیں۔

علاوہ ازیں اخبارات میں دنیا کے تجارتی اتار چڑھاؤ سے متعلق اطلاعات اور غیرملکی منڈیوں کے تازہ ترین بھاؤ اور اسی قسم کی مفید معلومات بھی شائع کی جاتی ہیں تا کہ ملک کا تاجر پیشہ پوری طرح باخبر رہے۔ اسی طرح کھیلوں وغیرہ سے متعلق بھی اخبار کا ایک حصہ وقف ہوتا ہے جس سے اس میدان میں قومی ٹیموں اور کھلاڑیوں کے کارناموں سے عام لوگ بھی واقف ہوتے رہیں اور کھیلوں کے شائقین بالخصوص اپنے ذوق کی تسکین کرسکیں۔

 پھر بعض اخبارات وقفہ وقفہ سے یا مقررہ دن پر اخبارات کے علمی ادبی ایڈ یشن بھی شائع کرتے رہتے ہیں تا کہ عوام کے ادبی ذوق کی نشونما اور تسکین بھی ہوتی رہے اس کے علاوہ اچھے اخبارات میں ایسے کارٹون بھی شائع ہوتے رہتے ہیں جوطنزیہ اور مزاحیہ رنگ میں کسی خاص مسئلہ معاملہ یا شخصیت کو ہمارے سے پیش کرتے ہیں۔

 یہ کارٹون بھی کبھی وہ کام کر جاتے ہیں جو بڑے بڑے مقالہ یا مضمون سے نہیں ہوسکتا۔ اس طرح ہمارے ہاں اردو اخبارات میں ایک فکاہیہ کالم بھی موجود ہوتا ہے۔ جس میں ہلکے پھلکے انداز میں بعض اوقات بڑے بڑے مسائل پر رائے زنی کی جاتی ہے ۔

یہ فکاہیہ کالم جہاں قارئین کے ذہن کو جلا بخشتے ہیں وہاں اس کی طبیعت کی شگفتگی کا سامان بھی مہیا کرتے ہیں۔ قصہ کوتاہ موجودہ عہد میں اخبارات کی دنیا بھر میں بڑھتی ہوئی مقبولیت اس امر کا ثبوت مہیا کرتی ہے کہ اخبارات اور جمہوریت لازم وملزوم ہیں ۔ اخبارات کے وجود کے بغیر جمہوریت کے فروغ اور انسانی تہذیب کے ارتقا کا تصور بھی ممکن نہیں ہے۔ ہمارے اپنے ملک میں آزادی کے حصول کے بعد اخبارات کی اشاعت اور تعداد میں روز افزوں اضافہ ہورہا ہے اور یہ ہمارے لیے نیک فال ہے۔

Find Relevant Posts:

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x