Essay on the “co-Education” for LAT and USAT

Mixed-sex education, also known as mixed-gender education, co-education, or coeducation, is a system of education where males and females are educated together. In Pakistan, co-education is prevailing everywhere making it an important topic to discuss.  Here you will find an Essay on the co-Education for LAT and USAT examinations. We have arranged it in both Urdu and English Languages.

Essay on the “co-Education” for LAT and USAT” (English Version)

Mixed education refers to the education of boys and girls together in the same school. Basically, the concept of mixed education is the concept of Western civilization. Where society is a society that does not impose any religious, moral, or legal restrictions on the free association of men and women. Where women are side by side with men in every sphere of life. Where there is no concept of a veil. Where the question of mahram and non-mahram for a woman is out of the question and where a girl or a woman walks around with a non-man, eats and drinks, or in orange parties.

Dancing together is not a bad thing but it is considered a requirement of civilization. In such an open society, if boys and girls study together in the same educational institution, then there is no surprise in it.

The point of surprise and surprise comes when there is an attempt to impose this concept of western civilization on the eastern society and for this, arguments are given in the name of development and in various other contexts that good minds Are influenced by Zehar Halahal, they start to consider the slang and recognize mixed education as having multiple benefits.

The argument in favor of co-education is often given with great force that our country is a poor and backward country that is still in the early stages of development. The resources of this poor country do not allow it to establish separate educational institutions for boys and girls from elementary to advanced levels of education.

Instead, if mixed education is adopted, the expenses will also be reduced and the quality of education will be higher by studying boys and girls together because they will develop a spirit of hard work rather than the idea of ​​competition. Will be. Girls will work day and night to outdo the boys and boys will work day and night to outperform the girls.

An argument in favor of co-education is also given that with the free association of boys and girls, the agitation of gender sentiments ceases and they can continue their educational journey with great concentration and satisfaction in a calm emotional atmosphere.

Their mutual hesitancy is removed by free association, and they get a chance to understand each other’s views on life. Through discussion and discussion, many misunderstandings about each other are cleared and the mental distance is reduced.

The students working together creates a sense of camaraderie among the students, so many girls prove not only to be quality friends in their future life but also to successfully support men in every field of life and take on big responsibilities.

An argument in favor of mixed education is also made that no society in this age of development can afford to isolate women from the race of life. It is the duty of every modern society to provide opportunities for women to work side by side with men in every field of life. Woman and man are the two wheels of the car of life.

Without either of the two, the vehicle of life is completely impossible to run. Therefore, when it is decided that men and women have to work together in all spheres of life, why not train them to work together from the beginning, and what better place for this training than in schools?

It cannot be because only in the educational institutions they can be taught the skill of living together along with their education and training in different areas of life.

These arguments in favor of mixed education are apparently very beautiful and strong. After reading or listening to them, one starts to feel that inclusive education is the key to the development of our society.

As soon as we adopt it, our national development vehicle will reach somewhere and thanks to its benefits, our society will become the most civilized, modern, and highly developed society in the world. But let’s get out of the world of concepts and come to the world of reality and see what mixed education has given to these western countries, from where the concept of mixed education has come to our world, what happens in the classrooms?

It is said that boys and girls getting an education together creates a spirit of competition and competition in them. But what actually happens is that male and female students start harboring sexual feelings and inclinations in a negative way.

They start taking interest in each other instead of education. In this way, instead of education, education becomes a laboratory for the expression of sexual feelings and from these laboratories, society is given the gifts of thousands of virgin mothers.

In fact, this argument of creating competition and competition in favor of co-education is highly fallacious and based on ignorance or ignorance of human nature. There are unlimited causes of sexual attraction in human body structure, color, speed, and speech.

In youth, when the maturity of consciousness in a person is very less, if he gets constant opportunities to meet the opposite sex (even if these opportunities are in the name of education), then he can control his negative emotions and control his emotions.

It is a very difficult task to avoid being unrestrained. So, boys and girls come together in the name of education, but the countless opportunities to be close to each other, instead of giving peace and satisfaction to their minds, keep them in a state of excitement and excitement all the time. In such a situation, how can they get the peace of mind and peace of mind that is necessary for quality education?

There is no word in this matter that man and woman are the two wheels of the car of life and running the car of life without either of them is completely wrong, but it is completely wrong to justify mixed education. If the two wheels of the car are locked in place, then the car can move. If both wheels are placed in the same place, then there is no question of whether the vehicle will move or not.

A man is a wheel in the vehicle of life, he has his duties. A woman is the second wheel in the vehicle of life, she has her own duties. A woman working alongside a man should not be taken to mean that she is being prepared to perform the tasks assigned to men in life. The matter of exceptional cases is different, but in the light of research by biologists, the physical systems and mental conditions of both men and women are different from each other.

A woman’s physical system is such that she is able to bear and bear the burden of raising a child. On the contrary, the man has to handle the heavy responsibilities of livelihood and life outside the home, so his physical system is stronger and more energetic than that of the woman.

Since the natural abilities of both men and women are different from each other, so the nature of their responsibilities is also different and it is natural to impose the responsibilities of all areas of life on both of them equally in the context of mixed education or any other aspect.

It is against the intention. When the duties of men and women are separate, how can the education and training of these separate duties be arranged through mixed education in the same school?

The fact is that the concept of co-education is a huge deception on the part of the western civilization toward women and its aim is nothing but the exploitation of women in the name of civilization and women’s liberation.

Whether a woman becomes a candlestick or a candlestick, whether she is a noble and homely woman, or whether she is always a woman, she remains a woman and despite free mixing with men in the name of civilization, her natural responsibilities are different from those of men.

In co-educational institutions, a man remains a man through education, but a woman does not remain a woman.

To say that woman is equal to man and can do everything that man can do, so she wants to work side by side with man in every sphere of life. It is a great deception. Through this beautiful slogan, apart from the natural duties of a woman, the man has also put the burden of livelihood on the fragile shoulders of the woman, and the deluded woman, who is carrying this burden happily, is not happy with the idea of ​​freedom.

From the Islamic point of view, we do not see any justification for mixed education. Mixed education promotes the mixing and free association of men and women, whereas Islam forbids it. Mixed education creates promiscuous behavior and informal relationships between men and women, which Islam does not tolerate at all. Islam teaches modesty.

Teacher discretion and orders to stay away from the forbidden. It is not possible according to Islam to allow or allow the free mixing of men. In Islam, it is even said that when a man and a woman are alone, they have the third devil.

Now let’s talk about the argument in favor of co-education, which is presented under the excuse of lack of resources, that the economic conditions of our poor country do not allow separate institutions for boys and girls at all levels. Therefore mixed education should be adopted to save costs. This argument of the proponents of mixed education is fallacious as well as extremely Buddhist.

If a nation begins to weigh every issue on the scales of profit and loss, then what is the justification for the moral values ​​of this nation? Then the thief should be allowed to steal so that his wealth increases.

The adulterer should be allowed to commit adultery so that he can satisfy his sexual instincts. Prostitutes should be allowed to practice as they circulate large sums of money in the coffers of the rich. If all these things can’t be allowed, then why the advice to adopt education with thousands of disadvantages just in the name of cost saving?

Now let’s talk about the argument in favor of co-education, which is presented under the excuse of lack of resources, that the economic conditions of our poor country do not allow separate institutions for boys and girls at all levels. can be established, therefore mixed education should be adopted to save costs.

This argument of the proponents of mixed education is fallacious as well as extremely Buddhist. If a nation begins to weigh every issue on the scales of profit and loss, then what is the justification for the moral values ​​of this nation? Then the thief should be allowed to steal so that his wealth increases.

The adulterer should be allowed to commit adultery so that he can satisfy his sexual instincts. Prostitutes should be allowed to practice as they circulate large sums of money in the coffers of the rich. If all these things can’t be allowed, then why the advice to adopt education with thousands of disadvantages just in the name of cost saving?

In order to avoid extremes, educationists suggest a middle way that if there is co-education up to the level of the fifth standard, it cannot lead to any moral deterioration, but after that, educational institutions for people and girls up to B.A.

However, it is necessary to be separated so that male and female students can fulfill their educational requirements and be protected from the harmful effects of mixed education. In our mosques, even today, boys and girls receive elementary religious education together, but they do not sit together, but the rows of boys are separate and the rows of girls are separate.

During the era of the Prophet (peace be upon him), all the work of education and training was done in the assembly of the Holy Prophet (peace and blessings of Allah be upon him). The women sat on one side and the men on the other, while a particular day in the week was reserved for women.

This method can be adopted in institutions of higher education so that while avoiding free mixing and observing the Islamic requirements of modesty and hijab, female students can also fulfill their educational needs in these institutions like students.

But it can only be called a temporary or temporary measure. If the formation of a proper Islamic society in the beloved country is desired, then for this it is necessary to say goodbye to mixed education and establish separate schools for boys and girls at all levels.

Essay on the “co-Education” for LAT and USAT” (Urdu Version)

مخلوط تعلیم

مخلوط تعلیم سے لڑکوں اور لڑکیوں کا ایک ہی درس گاہ میں اکٹھے تعلیم حاصل کرنا مراد ہے ۔ اصلا مخلوط تعلیم کا تصور مغربی تہذیب کا تصور ہے جہاں کا معاشرہ ایک ایسا معاشرہ ہے جس سے مردوں اور عورتوں کے آزادانہ میل جول پر کسی قسم کی کوئی مذہبی، اخلاقی یا قانونی قدغن عائد نہیں، جہاں عورتیں ہر شعبہ زندگی میں مردوں کے شانہ بشانہ کام کر رہی ہیں، جہاں پردے کا کوئی تصور موجود نہیں، جہاں عورت کے لیے محرم اور نامحرم کا سوال ہی خارج از بحث ہے اور جہاں کسی لڑکی یا عورت کا کسی غیر مرد کے ساتھ گھومنا پھرنا، کھانا پینا یا نارنجی رنگ کی محفلوں میں باہم رقص کرنا معیوب نہیں بل کہ عین تقاضائے تہذیب سمجھا جاتا ہے۔

ایسے کھلے معاشرے میں اگرلڑ کے اور لڑکیاں ایک ہی درس گاہ میں اکٹھے تعلیم حاصل کر یں تو اس میں تعجب اور حیرانی کی کوئی بات نہیں رہ جاتی ہے ۔ تعجب اور حیرانی کا مقام اس وقت آتا ہے جب تہذیب مغرب کے اس تصور کو مشرقی معاشرے پر مسلط کرنے کی کوشش کی جاتی ہے اور اس کے لیے ترقی کے نام پر اور دیگر مختلف حوالوں سے ایسے ایسے دلائل دیے جاتے ہیں کہ اچھے خاصے اذہان ان سے متاثر ہو کر زہر ہلاہل کو قند سمجھنے اور مخلوط تعلیم کو گونا گوں فوائد کا حامل تسلیم کرنے لگتے ہیں۔

مخلوط تعلیم کے حق میں یہ دلیل اکثر بڑے شدو مد سے دی جاتی ہے کہ ہمارا ملک ایک غریب اور پس ماندہ ملک ہے جو ابھی ترقی کے ابتدائی مراحل میں ہے۔ اس غریب ملک کے وسائل اس بات کی اجازت نہیں دیتے کہ وہ تعلیم کی نچلی سطح سے لے کر انتہائی تعلیم کی سطح تک لڑکوں اور لڑکیوں کے لیے الگ الگ تعلیمی ادارے قائم کر سکے۔

اس کی بجائے اگر تو مخلوط تعلیم کو اپنایا جائے تو اخراجات بھی کم ہوں گے اور لڑکوں اور لڑکیوں کے مل جل کر پڑھنے سے ان کا معیار تعلیم بھی اونچا ہو گا کیوں کہ ان کے اندر مقابلہ و مسابقت کے خیال سے زیادہ محنت کا جذبہ پیدا ہو گا ۔ لڑکیاں لڑکوں سے آگے نکل جانے کی دھن میں شب و روز محنت کریں گی اور لڑکے لڑکیوں سے بہتر کارکردگی دکھانے کے لیے دن رات ایک کر دیں گے۔

مخلوط تعلیم کے حق میں ایک دلیل یہ بھی دی جاتی ہے کہ لڑکوں اور لڑکیوں کے آزادانہ میل جول سے صنفی جذبات کی ہیجانی کیفیت ختم ہو کر رہ جاتی ہے اور وہ پرسکون جذباتی فضا میں اپنا تعلیمی سفر بڑی دل جمعی اور اطمینان سے جاری رکھ سکتے ہیں ۔ آزادانہ میل جول سے ان کی باہمی ججھک دور ہو جاتی ہے، انھیں زندگی کے بارے میں ایک دوسرے کے نظریات کوسمجھنے کا موقع ملتا ہے۔ آپس کی گفتگو اور بحث و تمحیص سے ایک دوسرے کے بارے میں بہت سی غلط فہمیاں رفع ہو جاتی ہیں اور ذہنی فاصلے کم ہو جاتے ہیں ۔

طلبہ کے دوش بدوش کام کرنے سے طالبات میں رفاقت کا احساس پیدا ہوتا ہے چنانچہ ایسی لڑکیاں آئندہ زندگی میں نہ صرف معیاری رفیق زندگی ثابت ہوتی ہیں بل کہ وہ زندگی کے ہر میدان میں کامیابی کے ساتھ مرد کی معاونت کرنے اور بڑی بڑی ذمہ داریاں سنبھالنے کے قابل ہو جاتی ہیں۔

مخلوط تعلیم کے حق میں ایک دلیل یہ بھی دی جاتی ہے کہ کوئی معاشرہ ترقی پذیری کے اس دور میں اس امر کا متحمل نہیں ہو سکتا کہ وہ عورتوں کو زندگی کی دوڑ سے الگ تھلگ کر دے۔ چنا نچہ زندگی کے ہر شعبے میں عورتوں کو مردوں کے شانہ بشانہ کام کرنے کے مواقع فراہم کرنا ہر جدید معاشرے کا فرض ہے ۔ عورت اور مرد زندگی کی گاڑی کے دو پہیے ہیں ۔

دونوں میں سے کسی ایک کے بغیر زندگی کی گاڑی کا چلنا سراسر محال ہے ۔ لہذٰا جب یہ بات طے شدہ ہے کہ عورت اور مرد کو زندگی کے تمام شعبوں میں مل کر کام کرنا ہے تو کیوں نہ انھیں شروع ہی سے مل کر کام کرنے کی تربیت دی جائے اور اس تربیت کے لیے درس گاہوں سے زیادہ موزوں جگہ اور کوئی نہیں ہوسکتی کیوں کہ درسگاہوں میں ہی ان کی تعلیم اور زندگی کے مختلف شعبوں میں تربیت کے ساتھ ساتھ انھیں باہم مل کر رہنے کا ہنر سکھا یا جا سکتا ہے۔

 مخلوط تعلیم کے حق میں یہ دلائل بظاہر بڑے خوبصورت اور زور دار ہیں۔ انھیں پڑھ کر یا سن کر ایک بار تو یوں*محسوس ہونے لگتا ہے جیسے مخلوط تعلیم ہی ہمارے معاشرے کی ترقی کی کلید ہے۔ جیسے ہی ہم اسے اپنا ئیں گے ہماری قومی ترقی کی گاڑی فراٹے  بھرتی ہوئی کہیں سے کہیں پہنچ جائے گی اور اس کی عنایات کی بدولت ہمارا معاشرہ دنیا کا مہذب ترین ،جدید ترین اور انتہائی ترقی یافتہ معاشرہ بن جائے گا ۔

لیکن آئیےذرا تصورات کی دنیا سے نکل کر حقیقت کی دنیا میں آئیں اور دیکھیں کہ مخلوط تعلیم نے ان مغربی ممالک کو کیا کچھ دیا ہے جہاں سے چل کرمخلوط  تعلیم کا تصور ہماری دنیا تک آیا ہے وہاں درس گاہوں میں کیا ہوتا ہے؟ کہا تو یہ جاتا ہے کہ لڑکوں اور لڑکیوں کے یک جا تعلیم حاصل کرنے سے ان میں مقابلہ اور مسابقت کا جذبہ پیدا ہوتا ہے؟

مگر حقیقتا جو بات وقوع میں آتی ہے وہ یہ ہے کہ طلبہ اور طالبات منفی قسم سے جنسی ہیجانات اور میلانات سراٹھانے لگتے ہیں اور وہ تعلیم کی بجاۓ ایک دوسرے میں دلچسپی لینا شروع کر دیتے ہیں ۔ اس طرح درس کا میں تعلیم کی بجائے جنسی جذبات کے اشتعال و اظہار کی تجربہ گاہیں بن جاتی ہیں اور ان تجربہ گاہوں سے معاشرے کو ہزاروں کی تعداد میں کنواری ماؤں کے تحفے عطا ہوتےہیں۔

در اصل  مخلوط تعلیم کے حق میں مقابلہ اور مسابقت پیدا کرنے کی یہ دلیل سخت مغالطہ انگیز ہے اور انسانی فطرت سے سراسر صرف نظر یا ناواقفیت پر مبنی ہے۔ انسان کے جسم کی ساخت، رنگ روپ اور رفتار و گفتار میں جنسی کشش کے غیر محدود اسباب موجود ہیں ۔ جوانی میں جب انسان میں شعور کی پختگی بہت کم ہوتی ہے، اگر اسے صنف مخالف سے میل ملاقات کے مسلسل مواقع ملیں (خواہ یہ مواقع تعلیم ہی کے نام پر کیوں نہ ہوں ) تو اس کا اپنے منفی جذبات پر قابو رکھتا اور اپنے جذبات کو بے لگام ہونے سے بچالیتا بڑا کٹھن کام ہے ۔

چنانچہ لڑ کے اور لڑکیاں اکٹھے تو تعلیم کے نام پر ہوتے ہیں مگر ایک دوسرے سے قربت کے لاتعداد مواقع ان کے ذہن کو سکون اور اطمینان بخشنے کی بجائے انھیں ہر وقت ایک جوش اور ہیجان کی کیفیت سے دو چار رکھتے ہیں۔ ایسے میں انھیں وہ دل جمعی اور ذہنی سکون کیسے حاصل ہو سکتا ہے جو معیاری تعلیم کے لیے ضروری ہے؟

اس امر میں کوئی کلام نہیں کہ مرد اور عورت زندگی کی گاڑی کے دو پہیے جہاں اور دونوں میں سے کسی ایک کے بغیر زندگی کی گاڑی کا چلنا سراسر حال ہے مگر اس سے مخلوط تعلیم کا جوازنکا لنا صر یحاً غلط ہے۔ گاڑی کے دو پہیے اپنی اپنی جگہ گلے ہوں تو تب ہی گاڑی رواں رہ سکتی ہے۔

اگر دونوں پہیے ایک ہی جگہ لگا دیے جائیں توگاڑی کے رواں ہونے یا رواں رہنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔ مرد زندگی کی گاڑی کا ایک پہیہ ہے اس کے اپنے فرائض ہیں ۔ عورت زندگی کی گاڑی کا دوسرا پہیہ ہے اس کے اپنے فرائض ہیں۔ عورت کا مرد کے شانہ بشانہ کام کرنے کا یہ مطلب نہیں لیا جانا چاہیے کہ اسے زندگی میں ان کاموں کی انجام دہی کے لیے تیار کیا جائے جومرد کو تفویض ہوۓ ہیں۔

استثنائی صورتوں کی بات دوسری ہے مگر ماہرین حیاتیات کی تحقیقات کی روشنی میں مرد اور عورت دونوں کے جسمانی نظام اور ذہنی کیفیات ایک دوسرے سے مختلف ہیں۔ عورت کا جسمانی نظام اس طرز کا ہے کہ وہ بچہ جنے اور اس کی پرورش کا بار اٹھانے کے قابل ہو۔ اس کے برعکس مرد کو کسب معاش اور گھر سے باہر کی زندگی کی کٹھن ذمہ داریاں سنبھالنا پڑتی ہیں، اس لیے اس کا جسمانی نظام عورت کی نسبت زیادہ مضبوط اور توانا ہے۔

چوں کہ عورت اور مرد دونوں کی فطری صلاحیتیں ایک دوسرے سے مختلف ہیں اس لیے ان کی ذمہ داریوں کی نوعیت بھی مختلف ہے اور تہذیب مخلوط تعلیم یا کسی اور حوالے سے دونوں پر زندگی کے تمام شعبوں کی ذمہ داریاں یکساں طور پر عائد کرنا فطرت کے منشا کے خلاف ہے۔ جب مرد اور عورت کے فرائض ہی الگ الگ ہیں تو ایک ہی درس گاہ میں مخلوط تعلیم کے ذریعے ان الگ الگ فرائض کی تعلیم اور تربیت کا اہتمام کیسے ہوسکتا ہے؟

حقیقت یہ ہے کہ مخلوط تعلیم کا نظریہ مغربی تہذیب کی طرف سے عورت کے ساتھ ایک بہت بڑے فریب کی حیثیت رکھتا ہے اور اس کا مقصد تہذیب اور آزادی نسواں کے نام پر عورت کے استحصال کے سوا کچھ نہیں۔ عورت چراغ خانہ ہو یا شمع انجمن بن جائے ، ایک شریف اور خانہ دار عورت ہو یا بادہ ہر جام ہو کر رہے بہر حال عورت رہتی ہے اور مردوں کے ساتھ تہذیب کے نام پر آزادانہ اختلاط کے باوجود اس کی فطری ذمہ داریاں مردوں سے مختلف ہوتی ہیں اور ان ذمہ داریوں کی تربیت اسے مخلوط تعلیم کے اداروں سے نہیں مل سکتی ۔ مخلوط تعلیم کے اداروں میں تعلیم سے مرد تو بہر حال مرد ہی رہتا ہے مگر عورت عورت نہیں رہتی ۔ بقول اقبال رحمۃ اللہ علیہ

جس       علم        کی         تاثیر      سے        زن        ہوتی       ہے        نازن

کہتے        ہیں        اسی       علم        کو          ارباب                نظر       موت

یہ کہنا کہ عورت مرد کے برابر ہے اور ہر وہ کام کر سکتی ہےجو مرد کر سکتا ہے لہذا اسے زندگی کے ہر شعبے میں مرد کے شانہ بشانہ کام کرنا چا ہے۔ ایک زبردست دھوکا ہے ۔ اس خوبصورت نعرے کے ذریعے مرد نے عورت کے فطری فرائض کے علاوہ کسب معاش کا بارگراں بھی عورت کے نازک کندھوں پر ڈال دیاہے اور فریب خوردہ عورت آزادی کے تصور سے نہال اس بوجھ کو گراں باری کے باد جو دخوش خوش اٹھائے پھر رہی ہے۔

اسلامی نقطہ نظر سے دیکھا جائے تو ہمیں مخلوط تعلیم کا کوئی جواز نظرنہیں آتا۔ مخلوط تعلیم مردوں اور عورتوں کے اختلاط اور آزادانہ میل جول کو پروان چڑھاتی ہے جب کہ اسلام اس کو روکتا ہے۔ مخلوط تعلیم مردوں اور عورتوں کے درمیان بے حجابانہ راہ و رسم اور بے تکلفانہ تعلقات پیدا کرتی ہے جب کہ اسلام اس کا قطعا ًروادار نہیں۔ اسلام تو حیا سکھاتا ہے۔

غض بصر کی تعلیم دیتا ہے اور نامحرم سے دور رہنے کا حکم دیتا ہے۔ مردوزن کے آزادانہ اختلاط کی اجازت دینا یا اس کو روا رکھنا اسلام کی رو سے ممکن نہیں۔ اسلام میں تو اس بارے میں یہاں تک کہا گیا ہے کہ جب ایک مرد ایک عورت اکیلے میں ہوتے ہیں تو ان کے پاس تیسرا شیطان ہوتا ہے۔ اس حقیقت کا اظہار جناب اکبر الہ آبادی نے اپنے مخصوص مزاحیہ رنگ میں یوں کیا ہے ۔

میں       بھی       گریجویٹ            ہوں،     تو          بھی       گریجویٹ

علمی        مباحثے               ہوں،     ذرا         پاس       آ          کے       لیٹ

بولیں      یہ          سچ         ہے،      علم        بڑھا،      جہل      گھٹ      گیا

لیکن      یہ          کیا         یقین       کہ         شیطان               ہٹ       گیا؟

اب ذرا مخلوط تعلیم کے حق میں اس دلیل پر بھی بات ہو جاۓ جو وسائل کی کمی کا عذر تراشتے ہوئے پیش کی جاتی ہے کہ ہمارے غریب ملک کے معاشی حالات اس بات کی اجازت نہیں دیتے کہ ہر سطح پرلڑکوں اور لڑکیوں کے لیے الگ الگ ادارے قائم کیے جاسکیں اس لیے اخراجات کی بچت ہی کی خاطر مخلوط تعلیم کو اپنا لینا چاہیے۔ مخلوط تعلیم کے حامیوں کی یہ دلیل مغالطہ انگیز ہونے کے ساتھ ساتھ انتہائی بودی بھی ہے۔

اگر ایک قوم ہر معاملے کو نفع و نقصان کے ترازو میں تولنے لگے تو پھر اس قوم کی اخلاقی اقدار کا کیا جواز رہ جاتا ہے؟ پھر تو چور کو چوری کی اجازت ہونی چاہیے کہ اس طرح اس کے مال میں اضافہ ہوتا ہے۔ زانی کو زنا کی اجازت ہونی چاہیے کہ اس طرح وہ اپنی جنسی جبلت کی تسکین کرتا ہے ۔ طوائف کو پیشہ کرنے کی اجازت ہونی چاہیے کہ اس طرح وہ امیروں کی تجوریوں میں بڑی رقم کو گردش میں لاتے ہیں ۔ اگر ان سب باتوں کی اجازت نہیں دی جاسکتی تو محض اخراجات کی بچت کے نام پر ہزاروں مفاسد سے پرمخلوط تعلیم کو اپنا لینے کا مشورہ آخر کیوں؟

تا ہم افراط و تفریط سے بچتے ہوئے ماہرین تعلیم ایک درمیانی راہ یہ تجویز کرتے ہیں کہ پانچویں  جماعت کی سطح تک اگر مخلوط تعلیم ہو تو کسی اخلاقی بگاڑ کا موجب نہیں بن سکتی مگر اس کے بعد بی اے تک لوگوں اور لڑکیوں کے لیے تعلیمی اداروں کا الگ الگ ہونا بہر حال ضروری ہے تا کہ طالبہ اور طالبات اپنی اپنی تعلیمی ضرور بات بھی پوری کرسکیں اور مخلوط تعلیم کے مضر اثرات سے بھی محفوظ رہیں۔

ہماری مساجد میں آج بھی بچے اور بچیاں اکٹھے ابتدائی دینی تعلیم حاصل کرتی ہیں لیکن یہ نہیں کہ دہ گھل مل کر بیٹھتے ہیں بلکہ بچوں کی قطار الگ ہوتی ہے اور بچیوں کی الگ ۔ عہد نبوی ﷺ میں تعلیم وتربیت کا سارا کام رسول اکرم خاتم النبیینﷺکی مجلس میں ہوتا تھا۔ خواتین ایک طرف اور مرد دوسری طرف بیٹھتے تھے۔

جب کہ ہفتے میں ایک خاص دن خواتین کے لیے مخصوص ہوتا تھا۔ یہی طریق کار اعلی تعلیم کے اداروں میں اختیار کیا جا سکتا ہے کہ آزادانہ اختلاط سے گریز کرتے ہوئے اور حیا وحجاب کے اسلامی تقاضوں کی پاسداری کرتے ہوئے طالبات بھی طلبہ کی طرح ان اداروں سے اپنی تعلیمی ضروریات پوری کر سکیں ۔ مگر اسے صرف ایک وقتی یا عارضی تدبیر ہی کہا جا سکتا ہے ۔ اگر وطن عزیز میں ایک صحیح اسلامی معاشرے کی تشکیل مطلوب ہے تو پھر اس کے لیے مخلوط تعلیم کو خیر باد کہنا اور لڑکوں اور لڑکیوں کے لیے ہر سطح پر الگ الگ درس گاہیں قائم کرنا ضروری ہے۔

Find Relevant Posts:

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x