Essay on “Self-Reliance” for LAT and USAT

Do you want to know the importance of self-reliance in your life? You will find an Essay on “Self-Reliance” for LAT and USAT examinations. We have arranged it in both Urdu and English Languages.

Essay on “Self-Reliance” (English Version)

Indeed, self-reliance is a meaningful way of life. This process is very important for a country or a house or an individual. To achieve this goal, man mobilizes his labor force and sources of income. If he does not, he needs crutches and becomes dependent on two others. As Pakistan is currently burdened by the debt of America, the World Bank, and the IMF. When we took loans, we pledged our power to higher institutions. These institutions are international pilgrims and we are international beggars.

Pakistan’s dream of self-reliance will not be fulfilled until the reasons for the present situation in Pakistan are discovered. Pakistan did not start indebtedness at birth. Rather, when Pakistan came into existence, Britain owed Pakistan 40 million pounds. But instead of strengthening the internal structure of the country, our inexperienced, incompetent, and self-righteous rulers considered their survival in debt.

The first budget of Pakistan was 49-89,1948 crores of Rs.57 lakhs. It had estimated revenue of 79.57 crores and a loss of 10 crores. It is true that this period was a period of difficulties. Pakistan’s second bat 1949-50 was presented at one billion and eleven crore rupees and by God’s grace, there was no loss. The fiscal budgets from 1954-55 were paralleled with no profit or loss.

Until the period of Yahya Khan, it was often balanced, but rather due to the increase in foreign exchange reserves. The first budget of the Bhutto government for the fiscal year 1972-73 was a balanced budget of 8 billion 95 crore rupees. There was no loss in it. The last budget of the Bhutto government for 1977-78 was 37 billion 18 crore rupees. In this, the budget deficit was 2 billion 36 crore rupees.

After the death of Quaid-e-Azam Muhammad Ali Jinnah, rather than during the creation of Pakistan, there were many problems for Pakistan. Which, the settlement of refugees, establishment of banks, industrialization, unemployment, and the Kashmir conflict were issues for which there was a very worrying situation. After Liaquat Ali Khan, the country progressed during the long reign of Ayub Khan.

It is called the golden age in the history of Pakistan. During this period, large heads and dams were built and special attention was paid to industrialization. After the era of Ayub Khan, the revolutionary era of Zulfiqar Ali Bhutto begins. In which he took industries under national control.

Due to this, the workers became victims of complacency and laziness. The labor unions only raised the battle cry for their rights or simply neglected their duties. As a result, the domestic industry suffered a lot. During Zulfiqar Ali Bhutto’s era, the foundation of the nuclear plant was laid in Pakistan. A steel mill was built with the cooperation of Russia. The International Islamic Sarbrahi Conference was organized in Lahore.

After Zulfiqar Ali Bhutto’s tenure, General Muhammad Ziaul Haque took over the Annan government. At that time the country was suffering from a crisis. Russian forces had entered Afghanistan. Pakistan was fighting a war of self-defense on the rocky cliffs of Afghanistan. Which put a lot of burden on the country’s economy. Besides, millions of Afghan refugees migrated to Pakistan and the country’s economy suffered a severe blow.

You also like:  Essay on "Hard work is the Key to Success" for LAT and USAT

Muhammad Khan Junejo’s government was unable to cope with it, and Zia-ul-Haq dismissed his government. After that, the era of Ms. Benazir Bhutto began. This was also a period of severe difficulties due to the opposition. Pakistan was just about to progress when President Ishaq Khan overthrew the Benazir government. The era of Mr. Nawaz Sharif also suffered from similar distractions. The governments of Benazir and Muhammad Nawaz Sharif could not complete their term and the country’s deficit gradually increased.

At such a time, Pervez Musharraf supported the crumbling walls of the country’s economy. It has not only stopped the flow of the country’s economy towards decline but has also reversed it.

The foreign exchange reserves of the country increased. This period was the most difficult and exacting in the history of Pakistan. Running a government in those days was no less than walking on a rough path. Because the superpower of the world, the United States, attacked the neighboring country of Pakistan unjustifiably and laid the foundation of aggression and terrorism at the national and international levels.

During the Afghan-US war, Pakistan has been suffering from severe pressure and financial crisis. This war was no less than walking on coals for Pakistan. The country’s economy suffered a severe blow. But General Pervez Musharraf’s government focused on improving the taxation system and expanding the road network across the country, apart from industrialization, so that the country seems to be on the way to development. The country’s economy began to show its stability.

It is true that unless the country’s foreign policy is made in the right way. Till that time it is not possible for any country to develop. Pakistan became prominent at the international level regarding the elimination of terrorism. But the desire for self-reliance could not be fulfilled. If the Pakistan-India Kashmir dispute is resolved during the recent tenure of Nawaz Sharif, the people of both countries will be able to lead a prosperous life.

As a large part of the budget of both the countries is spent on the army and defense expenses, the problems of the people remain the same. A nation that does not organize its people industrially can never establish itself internationally. On top of that, Pakistan is suffering from an energy crisis.

At present, in all the developed countries, their governments have organized their people. China, the world’s largest country, and countries like Japan, Germany, Taiwan, and Singapore have given industrial awareness and privileges to their people. By which the raw materials and static capacities were utilized and the countries developed.

We are self-reliant. A meaningful lifestyle requires breaking your shackles. You have to awaken and organize your inner strength. Pakistan will definitely emerge on the map of the world as a dignified and self-reliant country if it has to meet its expenses according to its resources.

Essay on “Self-Reliance” (Urdu Version)

خود انحصاری

حقیقتاً خود انحصاری … ایک بامعنی اسلوب حیات ہے۔ یہ طردعمل کسی ملک یا کسی گھر یا کسی فرد کے لیے انتہائی ضروری ہوتا ہے ۔ اس مقصد کے حصول کے لیے انسان اپنے قواۓ عملیہ اور ذرائع آمدن کو متحرک کرتا ہے۔ اگر وہ ایسا نہیں کرتا ہے تو اسے بیساکھیوں کی ضرورت پڑتی ہے اور دو دوسروں کا محتاج بن جاتا ہے۔ جس طرح پاکستان اس وقت امریکہ ،ورلڈ بینک اور آئی ایم ایف کے قرضوں کے بوجھ تلے دب چکا ہے۔ ہم قرضہ لیتے وقت اپنا اقتدار اعلی درج بالا اداروں کے پاس گروی رکھ دیتے گیا۔ یہ ادارے بین الاقوامی مہاجن ہیں اور ہم بین الاقوامی بھکاری۔

You also like:  Essay on "Why is Military Training Important?" for LAT and USAT

پاکستان کی موجودہ صورت حال کی وجوہات جب تک دریافت نہ کی جائیں گی اس وقت تک اس کی خود انحصاری کا خواب شرمندہ تعبیر نہ ہو گا ۔ پاکستان پیدائش کے ساتھ ہی مقروض ہونا شروع نہیں ہو گیا تھا۔ بلکہ جب پاکستان وجود میں آیا تھا اس وقت برطانیہ پاکستان کا 40 ملین پونڈز کا مقروض تھا۔ لیکن ہمارے نا تجربہ کار نااہل اور خود فرض حکمرانوں نے ملک کے اندرونی ڈھانچے کو مضبوط بنانے کے بجاۓ اپنی بقا قرضوں میں سمجھی۔

پاکستان کا پہلا بجٹ 49-89,1948 کروڑ 57 لاکھ روپے کا تھا۔ اس میں آمدنی کا تخمینہ 79 کروڑ 57 لاکھ اور خسارہ 10 کروڑ تھا۔ یہ درست ہےکہ یہ دور مشکلات کا دور تھا۔ پاکستان کا دوسرا بیٹ 50-1949 ایک ارب گیارہ کروڑ روپے کا پیش کیا گیا اور خدا کے فضل سے کوئی خسارہ نہ تھا۔ 55-1954 ء تک کے مالی بجٹ تقر یا بغیر نفع ونقصان کے متوازی بنتے رہے۔ یحیٰی خان کے دور تک بہت اکثر متوازن بلکہ زرمبادلہ کے ذخائر میں بڑھوتری کے موجب بنے ۔  1972-73کے مالی سال کا بھٹو حکومت کا پہلا بجٹ 8 ارب 95 کروڑ روپے کا متوازن بجٹ تھا۔ اس میں خسارہ نہیں تھا ۔ بھٹو حکومت کا آخری 78-1977 ء کا بجٹ 37 ارب 18 کروڑ رو پے تھا۔ اس میں بجٹ خسارہ 2 ارب 36 کروڑ روپے تھا۔

قائد اعظم محمد علی جناح کی وفات کے بعد بل کہ تشکیل پاکستان ہی کے وقت پاکستان کے لیے بہت ہی زیادہ مسائل تھے۔ جس میں مہاجرین کی آباد کاری ، بینکوں کا قیام ,صنعتکاری ، بے روزگاری کے اژدھام کو کام پر لگانے کے علاوہ تنازع کشمیر ایسے مسائل تھے جن کے لیے بہت تشویش ناک صورت حال تھی ۔ لیاقت علی خان کے بعد ایوب خان کے طویل دور میں ملک ترقی کی طرف گامزن ہوا۔ اسے پاکستان کی تاریخ میں سنہری دور کہا جا تا ہے۔

ان دوران بڑے بڑے ہیڈ اور ڈیم بنائے گئے اور صنعت کاری کی طرف خاص توجہ دی گئی۔ ایوب خان کے دور کے بعد ذوالفقار علی بھٹو کا انقلابی دور شروع ہوتا ہے۔ جس میں انھوں نے صنعتوں کو قومی تحویل میں لے لیا۔ جس سے مزدور کامل اور سستی کا شکار ہو گئے ۔ لیبر یونینوں نے صرف اپنے حقوق کی جنگ کا نعرہ لگا یا جب کہ فرائض کو صرف نظرانداز کیا۔ جس کے نتیجے میں ملکی صنعت کو بہت نقصان پہنچا۔ ذوالفقارعلی بھٹو کے دور میں پاکستان میں ایٹمی پلانٹ کی بنیاد رکھی گئی ۔ روس کے اشتراک سے سٹیل مل بنائی گئی۔ بین الاقوامی سطح پر اسلامی سر براہی کانفرنس لاہور میں منعقد کی گئی ۔

 ذوالفقار علی بھٹو کے دور کے بعد جنرل محمد ضیاء الحق نے عنان حکومت سنبھال لی۔ اس وقت ملک ایک بحران کا شکار تھا۔ روسی افواج افغانستان میں داخل ہو چکی تھیں۔ پاکستان اپنے دفاع کی جنگ افغانستان کی سنگلاخ چٹانوں میں لڑ رہا تھا۔ جس سے ملکی معیشت پر بہت بوجھ پڑا۔ علاوہ ازیں لاکھوں کی تعداد میں افغان مہاجرین ہجرت کر کے پاکستان میں آئے تو ملکی معیشت کو شدید دھچکا لگا۔

محمد خان جونیجو کی حکومت سنبھلنے بھی نہ پائی تھی کہ ضیاء الحق نے ان کی حکومت کو سبکدوش کر دیا۔ اس کے بعد محترمہ بے نظیر بھٹو کا دور شروع ہوا۔ یہ بھی اپوزیشن کی وجہ سے شدید مشکلات کا دور تھا ۔ پاکستان ابھی ترقی کی منازل طے کرنے کو تھا کہ صدر اسحاق خان نے بے نظیر حکومت کو ختم کر دیا۔ جناب نواز شریف کا دور بھی اسی طرح کی خلفشار میں مبتلا رہا۔ بے نظیر اور محمد نواز شریف کی حکومتیں اپنی مدت پوری نہ کر سکیں اور ملک کا بتدریج خسارہ بڑھتا رہا۔

You also like:  Essay on the "Female Education" for LAT and USAT

ایسے وقت میں پرویز مشرف نے ملکی معیشت کی گرتی ہوئی دیواروں کو سہارا دیا۔ ملکی معیشت کے زوال کی طرف بہتے ہوۓ بہاؤ کا رخ نہ صرف روک دیا ہے بلکہ اس کا رخ موڑ دیا ہے۔ ملک کے زرمبادلہ کے ذخائر بڑھے ۔ یہ دور پاکستان کی تاریخ میں سب سے مشکل کٹھن اور دقیق تھا۔ ان دنوں حکومت چلانا کسی بھی صورت پر خار راستے پر چلنے سے کم نہ تھا۔

کیوں کہ دنیا کی سپر طاقت امریکہ نے پاکستان کے پڑوسی ملک پر بلا جواز حملہ کر کے جارحیت کا اور دہشت گردی کی ملکی بلکہ بین الاقوامی سطح پر بنیاد رکھی۔  افغان امریکہ جنگ کے دوران پاکستان شدید دباؤ اور مالی بحران کا شکار رہا ہے۔ یہ جنگ پاکستان کے لیے کسی بھی طرح انگاروں پر چلنے سے کم نہ تھی ۔ ملکی معیشت کو شدید دھچکا لگا۔ لیکن جنرل پرویز مشرف حکومت نے ٹیکسز کے نظام کو بہتر بنانے اور صنعتکاری کے علاوہ پورے ملک میں سڑکوں کا جال پھیلانے پر اپنی توجہ مرکوز کر رکھی کہ ملک ترقی کی طرف گامزن نظر آتا ہے۔ ملکی معیشت اپنے استحکام کی مظہر ثابت ہونے لگی۔

یہ بات درست ہے کہ جب تک ملکی خارجہ پالیسی صحیح انداز سے نہیں بنائی جاتی ۔ اس وقت تک کسی بھی ملک کا ترقی کرنا ممکن نہیں ہے۔ دہشت گردی کے خاتمہ کے حوالے سے پاکستان بین الاقوامی سطح پر نمایاں ہوا ۔ لیکن خود انحصاری کی خواہش پوری نہ ہوسکی۔ نواز شریف کے حالیہ دور میں پاک بھارت تنازع کشمیر حل کر لیا جائے تو دونوں ملکوں کے عوام خوشحالی کی زندگی بسر کر سکیں گے ۔ دونوں ملکوں کے بجٹ کا کثیر حصہ فوج اور دفاعی اخراجات پر خرچ ہو جانے سے عوام کے مسائل جوں کے توں رہتے ہیں۔

وہ قوم کبھی بھی بین الاقوامی سطح پر اپنی حیثیت نہیں منوا سکتی جو اپنے عوام کو صنعتی اعتبار سے منظم نہیں کرتی ہے۔ اوپر سے مزید ظلم یہ کہ پاکستان توانائی کے بحران کا شکار ہے۔ اس وقت جتنے بھی ترقی یافتہ ممالک میں ان کی حکومتوں نے اپنے عوام کو منظم کیا ہے۔ دنیا کے سب سے بڑا ملک چین اور جاپان ، جرمنی ، تائیوان اور سنگا پور جیسے ملکوں نے اپنے عوام میں صنعتی شعور اور مراعات دی ہیں۔ جن سے وہاں کا خام مال اور جامد و ساکت صلاحیتیں بروئے کار لائی گئیں اور ملکوں نے ترقی کی ہے۔

ہمیں خود انحصاری ۔۔۔۔ ایک بامعنی اسلوب حیات کے لیے اپنی بیسا کھیاں توڑنا ہوں گی۔ اپنے اندر کی قوت کو بیدار ومنظم کرنا ہوگا۔ اپنے اخراجات اپنے وسائل کے مطابق کرنا ہوں گے تو پاکستان یقینا ایک باوقار اور خود انحصار ملک کی صورت میں دنیا کے نقشے پر ابھرے گا۔ انشا اللہ

Find Relevant Posts:

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x