Essay on “Problems Facing by Muslim Ummah” for LAT and USAT

Today the Muslim Ummah is facing so many problems all over the world. That’s why this topic is significant. You will find an Essay on “Problems Facing by Muslim Ummah” for LAT and USAT examinations. We have arranged it in both Urdu and English Languages.

Essay on “Problems Facing by Muslim Ummah” (English Version)

Shortly after the beginning of Islam, the sun of Islam began to shine far and wide and the borders of Arab rule began to meet the borders of Europe. The empires of Iran, Syria, Iraq, Egypt, Africa, Spain, Sicily, etc. became part of the Islamic empire. But the same Muslims whose steps were taken towards success and prosperity. After all, the same victorious nation fell into humiliation due to neglecting the principle of rising and development.

The Muslim ruler who led the world after the Rashidun Caliphs did not have a high religious, spiritual and moral standard that should be worthy of the Islamic rulers, nor did they have the spirit of Jihad nor the power of Ijtihad, which is necessary for leading the world and global leadership.

The foundation of political turmoil was laid by the martyrdom of Hazrat Uthman. During the reign of Hazrat Ali Karamullah, the Islamic empire was divided into different political factions. Later, with the martyrdom of Hazrat Imam Hussain (RA), the atmosphere of the Islamic Empire became utterly dark.

Many political and religious movements were born from the martyrdom of Hazrat Imam Hussain. The people of Iran resorted to the incident of Karbala to achieve their political aspirations. The Nation of Islam was divided into different factions and different states.

During the Caliphate of Rashidah, the criteria for choosing the Caliph were piety and ability. But during the Umayyad and Abbasid periods, the caliphate took the form of a monarchy, as a result of which a practical distinction was created between religion and politics, and politics was separated from the supervision of religion.

The rulers kept the government and politics in their hands alone. Mullahs and Ahl al-Din were either against the government or abstained from political life, thus Ahl D-in and Ahl-e-Din became two separate and distinct groups and the gap between them widened and sometimes exceeded alienation.

The turn of opposition has come. Because the ruler and the ruling class were not perfect models of religion and morals and people generally imitated their morals, habits, and tendencies. It was only natural that his spirit and psychology should influence national life. Because of this, Jahiliyyah got a chance to breathe inside the Islamic countries. Muslims have become devoid of morals like courage, patience, independence, and self-control. They became lovers of pleasure, sensuality, and materialism.

Kings Amrao Zara, Hussain, and Jameel liked to spend more time in the company of women. Social life has become devoid of shame and modesty. Falling into luxury, the Caliph disobeyed the affairs of the kingdom. The Russians and members of the empire rebelled and a series of rebellions ensued.

Since the Muslim rulers did not represent the Islamic Shariah and other laws of Islam in their morals, actions, and affairs, it had a bad effect on the non-Muslims and the message of Islam continued to fade from their hearts and their trust was lost by the incompetent rulers.

During this period of decline, numerous polytheisms and heresies were born among the Muslims. Gradually, the beliefs and ideas of the ancient ignorant nations and dangerous diseases like religious error also arose among the Muslims.

In the same period, the Muslim scholars and thinkers did not pay attention to these sciences and experiments, they used to subjugate the physical forces of the universe for the youth and Then they would make them conform to the objectives of Islam and lead to the spiritual and material dominance of Islam over the world.

Instead, Muslim scholars and thinkers continued to delve into metaphysics and Greek philosophy and theology for centuries. Which did not get any benefit.

Meanwhile, Christian Europe, which had been estranged from Islam for centuries, stormed Syria, and Palestine and usurped Jerusalem (Bait al-Maqdis). This was the Zangi family of Mosul. Two of whose people Imaduddin Zangi and his son Nooruddin Nagi were freed from the possession of Salah.

The Mujahideen efforts of Saladin and his timely leadership saved the Islamic world from the threat of enslavement by the Crusaders for a long time. But the world of Islam was again neglected and mutual differences and civil wars arose and the world of Islam fell from one end to the other. During this critical period, a Tatar temptation appeared. He conquered Iraq and Syria.

In 656 AD, he entered the caliphate of Baghdad in a victorious manner and destroyed it brick by brick. After that, he turned to Egypt but was defeated. The Ta-Tari attack dealt a great blow to the world of Islam. Religious studies, literature and poetry, writing and compilation, and ethics and society all had an impact. Much of the knowledge treasure was destroyed and the problem of protecting what was left arose.

After some time, the Ottoman Turks came into the limelight of history. Muslim Turks were a high-spirited and lively nation. The spirit of Jihad was very present in them. They could spread the material and spiritual dominance of Islam in the world with their military power.

Therefore, there was a time when the Ottoman sultans ruled Europe, Asia, and Africa simultaneously. The geographical position of the Turks also helped them for a while, but eventually, the Turks also failed despite all their abilities.

The reason for their downfall was the stagnation that had occurred in the knowledge and learning of the arts of war and military organization and the development of the Turks. Not only Turkey but the entire Islamic world from the East to the West was caught in the grip of this stagnation.

When the whole Islamic world was sleeping, Europe woke up from its long sleep and developed in every field. The history of nations was reshaped in this era.

In 1774, European nations defeated the Ottoman forces. Thus there were eighteen and the battles that took place between the Muslim nations of the East and the Western nations and powers in Morocco, Algeria, Egypt, India, and Turkestan in the nineteenth century were actually decided in the sixteenth and seventeenth centuries. Apart from this, treachery, differences, and economic decline are also important factors in the downfall of Muslims.

Restoration of Islamic Civilization

Fourteen centuries ago, when Islam appeared, there were great empires in the world at that time. With whose names the wings of greatness are still flying. Nirwana of Rome, Kasra of Iran, and Khaqan of China were merciless kings of Adam’s world, but their glory was forever erased like a wrong letter.

The reason was that their systems were not based on the right. On the contrary, Islam is the friend of the truth and the enemy of falsehood, so the Muslims tried to remove the spirit of exaltation for twelve years, but it had to face a complete failure. Daya and the children of Tawheed took out the funeral of the European domination as soon as they saw it.

Today, European civilization has exerted a profound influence on a segment of the Islamic world, but the overwhelming majority is trying to undo this influence. When the fifteenth century Hijri first looked at the world of Islam, it saw the rapidity and silence with which the European vices of life had infiltrated the Islamic ranks.

You also like:  Essay on "Modern Literature" for LAT and USAT

It is trying to clean its ranks from these vices with this speed and silence. Very soon Muslim youth will take a lesson from Europe’s rapidly deteriorating social structure and start a jihad against the pressure of exposure and nudity.

Mental Strength in Islamic Countries

Nations also need the mental capacity to benefit from their minerals. Allah Ta’ala has also enriched the people of Islamic countries with mental abilities. The people of Europe have also accepted the merit of our scholars. Europe and America are benefiting from our educated people. There is no reason why these people should not acquaint themselves with the right position of Khairul-Ummah.

The day is not far when Muslim youths whom Allah Almighty has endowed with academic, scientific, and administrative qualities. Bring the natural reserves of your countries out of the ground and put industrial development on four moons. In the past, Islamic scholars led the world in scientific inventions. It appears that history is about to repeat itself and Muslim scientists will once again take the lead in innovation. The principles of nature are immutable and immutable.

Nature never disobeys anyone for a long time. Nature takes the test. The blood of legitimate desires does not. It does not deprive the rightful person of his right forever. The test of Millat-e-Islamiyyah is over and how many treasures have fallen on its axis?

Now the next morning is the morning of red and yellow. When Pakistan was formed, our woolen and cotton fabrics defeated the British factories. The surgical supplies of Sialkot used to go to Europe, but unfortunately here too we had to go through the ordeal.

We fell victim to the conspiracies of others and our own short-sightedness, but these trials are now nearing their logical end. The mental capacity of our youth is coming into action with the store of energy. When the store of mental power in a country is abundant, it breaks every barrier of compulsion and prepares the field of action for itself. Does it.

In the modern world, the example of Germany and Japan is before us. This law of nature cannot be altered by any power of the void.

Distribution of Defense Requirements

In Islamic countries, wealth is accumulated not only in exchange for oil. Rather, the gold mines there are eager to extract gold, but remember that the enemy fights with weapons. Aman’s head cannot be beaten with gold and silver coins.

A Muslim cannot truly stand on his own feet until he becomes self-sufficient in arms factories. The Ummah of Islam had never faced so many and bloodthirsty enemies in history. From Pakistan to Morocco, there is a single line of Muslims. This region is the heart of the entire Muslim world. The population of Muslims is more than half of the entire population of the world, but the Islamic world is surrounded by enemies from all sides.

Wolves are standing on the borders and the cancer of conspiracies is strengthening its roots. The reason for all this trouble is that Muslims are not self-sufficient in arms. Although the Arab countries are the richest countries in the world, they are in need of a change in weapons.

Today, on the day of Eid al-Adha, the newspapers are saying that the relevant committee of the American Congress has rejected the proposal to sell a certain type of modern aircraft to Saudi Arabia. The question arises as to how long we will remain at the mercy of others for weapons.

Today, no empire in the world can reach the individual power of the Nation of Islam. Our nine young men are the bravest and bravest men. Cold and hot wars are fought not only with bravery but also with subjugation. The United States dropped an atomic bomb and destroyed Ja Pani Shujaat.

When the European nations conquered the Islamic world, one of the reasons was that they were superior in weapons. The British were forced to flee the subcontinent because the Muslim soldiers had received advanced military training and the British feared it.

Today, the current history also tells us the fact that we have no right to survive without preparing defense weapons. When the Prophet of Islam, Khatam-ul-Nabieen (peace be upon him) said goodbye, the heirs did not leave behind any inheritance of the world, but there was a mandatory stock of defense equipment, such as swords and spears, etc. in the house.

Industrial and Agricultural Development

After defense equipment, our second necessity is to stand on our feet for everything from grains, gram dal, shirt buttons, and bootstraps to atomic bombs.

Mineral deposits in Islamic Countries

Today, Islamic governments own their own land and destiny. In Islamic lands, there are vast and endless reserves of gifts of nature, and they are always waiting for Farhad to appear. What are the minerals that are not found in the lands of Islamic countries? Oil wells are boiling from the depths of the ocean and the whole world is waiting for every drop of them. If the Arab world withholds the benefit of its oil springs from Europe today, then the whole life of Europe will be permanently suspended and not even a trace of their industries will be seen.

Judaism

In the First World War, the Arabs sided with the British against Turkey. The British rewarded him by handing over a part of his homeland to the Jews.

The British Prime Minister announced in 1922 that Palestine is the homeland of the Jews. Therefore, they will be resettled here again. The Arab inhabitants of Palestine were displaced from their homes and a Jewish state was established there.

This state has gradually developed such strength that the entire nation has been challenging Islam. The intention of the Jews is that they spread their arms over the entire Arab world. The target of the Zionist movement is the Arab world.

The structure of this movement is also hiding the secret that the Jews want to fall head over heels intoxicated by their own power. The days of interpretation of the Holy Qur’an’s declaration have come near, and wherever they are, shame has been attached to them. For this, the people of Islam not only have to eat the essence of prudence but also have to play the game of fire and blood.

Essay on “Problems Facing by Muslim Ummah” (Urdu Version)

امت مسلمہ کو درپیش مسائل

آغاز اسلام کے تھوڑے عرصہ بعد ہی اسلام کا آفتاب دُور دُور تک چمکنے لگا اور عربوں کی حکومت کی حدود یورپ کی سرحدوں سے ملنے لگیں ۔ ایران ، شام، عراق، مصر، افریقہ، اسپین اور سسلی وغیرہ کی سلطنتیں اسلامی سلطنت کا جزو بن گئیں ۔ لیکن وہی مسلمان جن کا قدم جس طرف اٹھتا تھا کامیابی و کامرانی ہمرکاب ہوتی تھی۔ آخر وہی فاتح قوم عروج و ترقی کے اصول کو پس پشت ڈالنے کی وجہ سے ذلت میں گرگئی۔

خلفائے راشدین کے بعد دنیا کی رہنمائی کرنے والے مسلمان حکمران کا دینی ،روحانی اور اخلاقی معیار بلند نہ تھا جو اسلامی حکمرانوں کے شایان شان ہونا چاہیے نہ ان میں روح جہادتھی نہ قوت اجتہاد ، جو دنیا کی پیشوائی اور عالم گیر قیادت کے لیے ضروری ہے ۔ سیاسی انتشار کی بنیاد تو حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے شہید ہونے سے ہی پڑ گئی تھی ۔ حضرت علی کرم اللہ وجہ کے عہد میں اسلامی سلطنت مختلف سیاسی دھڑوں میں بٹ گئی۔ بعد ازاں حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ کی شہادت سے اسلامی سلطنت کی فضا بالکل تاریک ہوگئی ۔ حضرت امام حسین” کی شہادت سے کئی سیاسی اور مذہبی تحریکوں نے جنم لیا۔ اہل ایران نے سیاسی امنگوں کے حصول کے لیے واقعہ کربلا کا سہارا لیا ۔ عباسی تحریک کی اساس بھی واقعہ کر بالا تھی۔ غرض یہ ایک ایسا سلسلہ شروع ہوا جس سے ملت اسلامیہ مختلف دھڑوں اور مختلف ریاستوں میں تقسیم ہوگئی ۔

You also like:  Essay on the "Place of Students in Building a Nation" for LAT and USAT

خلافت راشدہ کے دور خلافت میں خلیفہ کے انتخاب کا معیار تقوی اور قابلیت تھا۔ لیکن اموی اور عباسی عہد میں خلافت ملوکیت کی شکل اختیار کر گئی اس کے نتیجہ میں دین و سیاست میں عملی تفریق پیدا ہوگئی اور سیاست دین کی نگرانی سے علیحدہ ہوگئی ۔ حکمران حکومت و سیاست کو تنہا اپنے ہاتھ میں رکھتے ۔

ملا اور اہل دین یا تو حکومت کے خلاف رہتے یا سیاسی زندگی سے کنارہ کشی اختیار کرتے اس طرح اہل دین اور اہل دنیا کے دو علیحدہ وعلیحدہ گروہ بن گئے اور ان کے درمیان اختلاف کی خلیج وسیع ہوتی گئی اور بعض اوقات بیگا نگی سے بڑھ کر مخالفت کی نوبت آ گئی ۔ حکمران اور حکمران طبقہ چونکہ دین و اخلاق کا کامل نمونہ نہیں تھا اور لوگ عموما ً انہی کے اخلاق و عادات و رحجانات کی تقلید کرتے تھے۔ ان کی روح اور نفسیات کا قومی زندگی پر اثر پڑنا عین  قدرتی تھا۔ اس وجہ سے جاہلیت کو اسلامی ممالک کے اندر سانس لینے کا موقع ملا۔ مسلمان شجاعت، صبر و استقلال اور ضبط نفس جیسے اخلاق سے عاری ہو گئے ۔ لذت پرستی ،شہوت پرستی ،مادہ پرستی کے دلدادہ بن گئے ۔

بادشاہ امراو زرا،حسین و جمیل عورتوں کی صحبتوں میں زیادہ وقت گزارنا پسند کرتے تھے۔ معاشرتی زندگی شرم و حیا اور عصمت و عفت سے عاری ہوگئی۔ عیش پرستی میں پڑ کر خلفا نے امور سلطنت سے بے اعتنائی برتی۔ روسا اور ارکان سلطنت خود سر ہو گئے اور بغاوتوں کا سلسلہ چل نکلا۔ چونکہ مسلمان حکمران اپنے اخلاق و اعمال و معاملات میں اسلامی شریعت اور دیگر قوانین اسلام کی نمائندگی نہیں کرتے تھے اس لیے غیر مسلموں پر برا اثر پڑا اور ان کے دلوں سے اسلام کے پیغام کا اثر جاتا رہا اور ان کا اعتماد نا اہل حکمرانوں نے زائل کر دیا۔ اس دور انحطاط میں مسلمانوں میں بے شمار شرک و بدعات نے جنم لیا۔ آہستہ آہستہ مسلمانوں میں قدیم جاہل قوموں کے عقائد و خیالات اور دینی گمراہی جیسے خطرناک مرض بھی پیدا ہو گئے ۔اسی دور میں مسلمان علما ومفکرین نے ان علوم و تجربوں کی طرف توجہ نہ دی جوان کے لیے کائنات کی طبعی قو تیں مسخر کر دیتے اور پھر وہ ان کو اسلام کے مقاصد کے عین مطابق بنا کر عالم پر اسلام کے روحانی اور مادی تسلط کا باعث بنتے ۔ اس کی بجائےمسلمان علما اور مفکر ین علوم ما بعد الطبیعات اور یونانیوں کے فلسفہ الہٰیات میں صدیوں تک دیدہ ریزی کرتے رہے۔ جس کا کوئی فائدہ حاصل نہ ہوا۔

ای اثناء میں مسیحی یورپ جو صدیوں سے اسلام سے خار کھائے بیٹھا تھا، نے شام فلسطین پر دھاوابول دیا اور یروشلم (بیت المقدس) پر غاصبانہ قبضہ کر لیا عین اس کش مکش کے دور میں عالم اسلام کے افق پر ایک نیا ستارہ طلوع ہوا ۔ یہ موصل کا زنگی خاندان تھا۔ جس کے دو افراد عمادالدین زنگی اور اس کے فرزند نور الدین نگی نے صلیوں کے قبضے سے آزاد کرایا۔ صلاح الدین کی مجاہدانہ کوششوں اور ان کی بروقت قیادت نے عالم اسلام کو صلیبیوں کی غلامی کی خطرے سے عرصہ تک کے لیے محفوظ کر دیا۔ لیکن عالم اسلام پر پھرغفلت طاری ہوگئی اور باہمی اختلافات اور خانہ جنگیوں نے سر اٹھایا اور عالم اسلام پر ایک سرے سے دوسرے سرے تک انحطاط اور تنزل چھا گیا۔

اس نازک دور میں ایک فتنہ تاتاری نمودار ہوا۔ انھوں نے آنا فان عراق و شام پر قبضہ کر لیا۔656ء میں یہ تا تاری دارلخلافہ بغداد میں فاتحانہ انداز میں داخل ہوئے اور اس کی اینٹ سے اینٹ بجادی اس کے بعد انھوں نے مصر کا رخ کیا مگر شکست فاش کھائی ۔ تا تاری حملہ سے عالم اسلام کو زبردست دھچکا لگا ۔ علوم دینیہ ، ادب و شاعری تصنیف و تالیف اور اخلاق و معاشرت سب پر اثر پڑا۔ بہت سارا علمی خزانہ تباہ و برباد ہو گیا اور جو بچ گیا اس کی حفاظت کا مسئلہ پیدا ہو گیا۔ کچھ عرصہ بعد عثمانی ترک تاریخ کے منظر عام پر آئے ۔ مسلمان ترک ایک بلند حوصلہ و پر جوش اور زندہ قوم تھی ۔ ان میں جہاد کا جذبہ بدرجہ اتم موجود تھا۔

وہ اپنی جنگی طاقت سے اسلام کے مادی اور روحانی تسلط کو دنیا میں پھیلا سکتے تھے ۔اس لیے ایک وقت تھا جب عثمانی سلاطین یورپ، ایشیاء اور افریقہ پر بیک وقت حکومت کرتے تھے ۔ ترکوں کی جغرافیائی حیثیت بھی ان کے لیے ممدود معاون بھی لیکن بالآ خر ترک بھی تمام تر صلاحیتوں کے باوجود ز وال پذیر ہوئے ۔ ان کے زوال کا سبب وہ جمود تھا جو ترکوں کی علم وتعلم فنون جنگ اور عسکری تنظیم و ترقی میں واقع ہو چکا تھا۔ اس جمود کی لپیٹ میں صرف ترکی ہی نہیں بلکہ پورا عالم اسلام مشرق سے لے کر مغرب تک آیا ہوا تھا۔

جب سارا عالم اسلام سو رہا تھا تو یورپ اپنی لمبی نیند سے بیدار ہوا اور اس نے ہر شعبے میں ترقی کی ۔ قوموں کی تاریخ اس دور میں نئے سرے سے ڈھل ری تھی ۔ 1774ء میں یورپ کی قوموں نے عثمانی افواج کوشکست دی۔ اس طرح اٹھار ہو یں اور انیسویں صدی میں مراکش، الجزائر،مصر، ہندوستان اور ترکستان میں مشرق کی مسلمان اقوام اور مغربی قوموں اور طاقتوں کے درمیان جومعرکے پیش آئے ان کا فیصلہ دراصل سولہویں اور سترھویں صدی میں ہو گیا تھا۔ اس کے علاوہ غداری ، اختلافات اور اقتصادی تنزل بھی مسلمان کے زوال میں اہم عنصر کی حیثیت رکھتے ہیں۔

اسلامی تہذیب کی بحالی

آج سے چودہ صدی پیشتر اسلام نے جب ظہور کیا تھا تو اس وقت دنیا میں بڑی بڑی سلطنتیں قائم تھیں۔ جن کے ناموں کے ساتھ آج بھی عظمتوں کے پر چم لہرا رہے ہیں ۔ روما کا نیر و، ایران کا کسریٰ اور چین کا خاقان دنیائے آدم کے شاہان بے امان تھے لیکن ان کی شوکت ہمیشہ کے لیے حرف غلط کی طرح مٹ گئی۔ سبب یہ تھا کہ ان کے نظاموں کی بنیادحق پر نہ تھی ۔ اس کے برعکس اسلام حق کا دوست اور باطل کا دشمن ہے اس لیے مسلمانوں نے بارہ سوسال تک سر بلندی کی مثال قائم کی روح نکالنے کی کوشش کی لیکن اس کو سراسر نا کامی کا منہ دیکھنا پڑا۔

اسلام نے اپنی ابدیت کا ثبوت رہ رہ کر دیا اور فرزندان توحید نے دیکھتے ہی یورپی تسلط کا جنازہ نکال دیا۔ آج یورپی تہذیب نے اسلامی دنیا کے ایک طبقہ پر گہرا اثر ڈال رکھا ہے لیکن غالب اکثریت اس اثر کو زائل کرنے کے لیے کوشاں ہے۔ پندرھو یں صدی ہجری نے جب پہلے روز عالم اسلام پر نظر ڈالی تو دیکھا کہ جس تیزی اور خاموشی سے یورپی رذائل زندگی نے اسلامی صفوں میں نفوذ کیا تھا ۔ اس تیزی اور خاموشی سے اپنی صفوں کو ان رذائل سے پاک کرنے میں کوشاں ہے۔ بہت جلد مسلم نوجوان یورپ کے تیزی سے بگڑتے ہوئے معاشرتی ڈھانچے سے عبرت اندوز ہوکر نمائش اور عریانی کے دباؤ کے خلاف جہاد شروع کر دیں گے۔

You also like:  Essay on the "Unity of the Islamic World" for LAT and USAT

اسلامی ممالک میں ذہنی قوت

اقوام کو اپنی معدنیات سے مستفید ہونے کے لیے ذہنی استعداد کی بھی ضرورت ہوتی ہے۔ اللہ تعالی نے اسلامی ممالک کے باشندوں کو ذہنی استعداد سے بھی مالا مال کیا ہے ۔ ہمارے اہل علم کی لیاقت کا لوہا اہل یورپ نے بھی مان لیا ہے۔ ہمارے تعلیم یافتہ اشخاص سے یورپ اور امریکہ والے فائدہ اٹھار ہے ہیں۔ کوئی وجہ نہیں کہ یہی افراد اپنی لیاقت کو خیر الامم کے صحیح مقام سے آشنا نہ کر دیں ۔ وہ دن دور نہیں کہ مسلم نو جوان جن کو اللہ تعالی نے علمی، سائنسی اور انتظامی خوبیوں کا مایہ دار کیا ہے۔ اپنے اپنے ملکوں کے قدرتی ذخائر کو زمین سے باہر لاکر صنعتی ترقی کو چار چاند لگا دیں۔

گزشتہ زمانے میں علماۓ اسلام نے سائنسی ایجادات میں دنیا کی رہبری کی تھی ۔ یوں نظر آتا ہے کہ تاریخ اپنے آپ کو دہرانے والی ہے اور مسلمان سائنس دان ایک بار پھر ایجادات کے باب میں قیادت کا مقام سنبھالیں گے۔ فطرت کے اصول اٹل اور نا قابل تغیر ہیں ۔ فطرت جو ہر قابل سے زیادہ دیر تک بے اعتنائی کبھی نہیں کرتی ۔ فطرت امتحان ضرور لیتی ہے ۔ جائز تمناؤں کا خون نہیں کرتی ۔ وہ حقدار کو اپنے حق سے ہمیشہ کے لیے محروم نہیں رکھتی ۔ ملت اسلامیہ کا امتحان بہت ہو گیا اور اس کی محروی پر کتنی ہی خزا ئیں فغاں سر کر چکیں ۔

اب اگلی صبح سرخروئی اور کامرانی کی صبح ہے۔ پاکستان بنا تھا تو ہمارے اونی اور سوتی کپڑوں نے برطانوی کارخانوں کو مات دے دی تھی ۔ سیالکوٹ کا جراحی کا سامان یورپ تک جا تا تھالیکن افسوس یہاں بھی ہمیں آزمائیش کی کٹھن منزل سے گزرنا پڑا۔ ہم غیروں کی سازشیں اور اپنوں کی کوتاہ نظری کا شکار ہو گئے لیکن یہ آزمائشیں بھی اب اپنے منطقی انجام کے قریب آلگی ہیں ۔ ہمارے نوجوانوں کی ذہنی استعداد تاز وقوت کے ذخیرہ کے ساتھ میدان عمل میں اتر رہی ہے کسی ملک میں ذہنی قوت کا ذخیر ہ جب وافر ہو جا تا ہے تو وہ مجبوری کے ہر حصار کو توڑ کر نکلتا ہے اور اپنے لیے عمل کے میدان خود تیار کر لیتا ہے ۔ جد ید دنیا میں جرمنی اور جاپان کی مثال ہمارے سامنے ہے۔ فطرت کے اس قانون کو باطل کی کوئی طاقت تغیر آشنا نہیں کرسکتی ہے۔

دفاعی ضروریات کی بہم رسانی

اسلامی ممالک میں نہ صرف تیل کے عوض دولت کے انبار جمع ہور ہے ہیں۔ بلکہ وہاں سونے کی کانیں سونا اگلنے کے لیے بے تاب ہیں لیکن یادر ہے کہ دشمن کا مقابلہ اسلحہ سے ہوتا ہے ۔ امن کا سر سونے اور چاندی کے سکوں سے پھوڑا نہیں جا سکتا ہے۔ مسلمان اس وقت تک صحیح معنوں میں اپنے پاؤں پر کھڑا نہیں ہوسکتا جب تک وہ اسلحہ کے کارخانوں میں خود کفیل نہیں ہو جاتا ہے۔

امت اسلامیہ کو تاریخ میں کبھی اتنے کثیر اور خونخوار دشمنوں سے سابقہ نہیں پڑا تھا۔ پاکستان سے لے کر مراکش تک مسلمانوں کا ایک ہی سلسلہ آباد ہے۔ یہ خطہ پوری مسلم دنیا کا دل ہے۔ مسلمانوں کی آبادی بھی دنیا کی پوری آبادی کے نصف سے زیادہ ہے لیکن اسلامی دنیا ہر طرف سے دشمن کے گھیرے میں ہے ۔ بھیڑیے سرحدوں پر دانت نکالے کھڑے ہیں اور سازشوں کے سرطان اپنی جڑیں مضبوط کر رہے ہیں۔

اس ساری مصیبت کا سبب یہ ہے کہ مسلمان اسلحہ میں خودکفیل نہیں ہیں ۔ عرب ممالک دنیا کے امیر ترین ممالک سہی لیکن اسلحہ میں اغیار کے محتاج ہیں ۔ آج عید قربان کے روز اخبارات کہہ رہے ہیں کہ امریکی کانگریس کی متعلقہ کمیٹی نے سعودی عرب کو ایک خاص قسم کے جدید طیارے فروخت کرنے کی تجویز مستر د کر دی ہے ۔ سوال پیدا ہوتا ہے کہ ہم کب تک ہتھیاروں کے لیے دوسروں کے رحم و کرم پر رہیں گے۔ آج ملت اسلامیہ کی انفرادی طاقت کو دنیا کی کوئی سلطنت پہنچ نہیں سکتی ہے۔ ہمارے نو جوان بہادر ترین اور زیرک ترین مرد ہیں ۔

سرد و گرم جنگیں بہادری ہی سے نہیں زیر کی سے بھی لڑی جاتی ہیں ۔ امریکہ نے ایک ایٹم بم پھینک کر جا پانی شجاعت کو ٹھکانے لگا دیا تھا۔ جب یورپی اقوام نے دنیائے اسلام پر قبضہ جمایا تھا تو اس کی ایک وجہ یہ بھی تھی کہ وہ اسلحہ میں برتر تھے۔ انگریز برصغیر سے اس لیے بھاگنے پر مجبور ہوا تھا کہ مسلمان سپاہ کو جدید ترین فوجی ٹریننگ مل گئی تھی اور انگریز اس سے خائف تھا۔ آج ہمیں حال کی تاریخ بھی اس حقیقت کا پتا دے رہی ہے کہ دفاعی اسلحہ کی تیاری کیے بغیر ہمیں زندہ رہنے کا کوئی حق حاصل نہیں۔ پیغمبر اسلام خاتم النبیینﷺ نے وصال فرمایا تھا تو متاع دنیا کا کوئی ورثہ چھوڑ کر نہ گئے تھے لیکن گھر میں دفاعی سامان یعنی تلواروں اور بر چھیوں وغیرہ کا لازمی ذخیرہ موجود تھا ۔

صنعتی اور زرعی ترقی

دفاعی سامان کے بعد ہماری دوسری ضرورت دانے ،چنے کی دال ،قمیض کے بٹن اور بوٹ کے تسمے سے لے کر ایٹم بم تک کے لیے اپنے قدموں پر کھڑاہونا ہے۔

اسلامی ممالک میں معدنی ذخائر

آج اسلامی حکومتیں اپنی سرزمین اور قسمت کی خود مالک ہیں ۔اسلامی سرزمینوں میں عطیات قدرت کے بے بہا اور بے پایاں ذخیرے پوشیدہ بڑے ہیں اور اپنی نمود کے لیے ہمیشہ فرہاد کے منتظر ہیں۔ وہ کون سی معدنیات ہیں جن کا سراغ اسلامی ممالک کی سر زمینوں میں نہیں ملتا ہے ۔ تیل کے چشمے بحرو بر کی گہرائیوں سے اُبل رہے ہیں اور پوری دنیا ان کی ایک ایک بوند کے لیے آس لگائے بیٹھی ہے ۔ عرب دنیا اگر آج اپنے روغنی چشموں کا فیض یورپ سےروک لے تو یورپ کی پوری زندگی آنا ًفا نا ًمعطل ہو کر رہ جائے اور ان کی صنعتوں کی چکا چوند کا نشان تک نظر نہ آئے ۔

یہودیت

پہلی عالمگیر جنگ میں عربوں نے ترکیہ کے خلاف انگریزوں کا ساتھ دیا تھا۔ اس کا صلہ انگریز نے انھیں یہ دیا کہ ان کے وطن کا ایک حصہ یہود کے حوالے کر دیا۔ برطانوی وزیراعظم نے 1922ء میں اعلان کیا کہ فلسطین یہود کا آبائی وطن ہے۔اس لیے ان کو دوبارہ یہاں آباد کیا جاۓ گا ۔ فلسطین کے عرب باشندے گھر سے بے گھر ہو گئے اور وہاں یہودی ریاست قائم ہوگئی ۔ اس ریاست نے آہستہ آہستہ اتنی قوت پیدا کر لی ہے کہ ساری ملت اسلامیہ کو للکار رہی ہے۔

یہود کے ارادے یہ ہیں کہ وہ اپنے بازو پھیلا کر پوری عرب دنیا پر پنجے گاڑے یہودی پھیلاؤ کا مالیخولیا ان میں تحریک کی صورت اختیار کر گیا ہے ۔ صیہونی تحریک کا نشانہ عرب دنیا ہے۔ اس تحریک کی سرشت بھی اس راز کی غمازی کر رہی ہے کہ یہود اپنی ہی طاقت کے نشہ میں مخمور ہو کر سر کے بل گرا چاہتے ہیں۔  قرآن حکیم کے اس اعلان کی تعبیر کے دن قریب آ گئے ہیں کہ یہوہ جہاں کہیں بھی ہوں ان پر ذلت چسپاں کر دی گئی ہے۔ اس کے لیے اہل اسلام کو نہ صرف تدبر کا جوہردکھانا ہے۔بلکہ آگ اور خون کا کھیل بھی کھیلنا ہے ۔

Find Relevant Posts:

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x