Essay on “Modern Literature” for LAT and USAT

Do want to know about the current era of Modern Literature? Well, you can see many examples of Modern Literature in today’s writings.

Here you will find an Essay on “Modern Literature” for LAT and USAT examinations. In the LAT and USAT examinations, you can write essays in both Urdu and English Languages. So we have arranged both versions here.

Essay on “Modern Literature” (English Version)

For the last few years, the word “modernity” is being used again and again in our literature, as its usage is increasing, its meaning is also increasing. Due to multiple interpretations, this word has become synonymous with disturbed imagination. It seems that everyone is trying to give their feeble capacity the name of modernity. In this effort, there is neither true dedication nor any creative achievement. However, there is no way to make modernity popular among the people.

It is difficult to give life to literature without the ability. Those who try to create literature without ignoring the changing consciousness of life are actually trying to run without legs. Just as a knot cannot be tied in the air, literature cannot be created in a vacuum.

In such a case, whenever a generation tries to create literature without being related to its language, culture, and literature, the result will be the same as what we see today in the “creations” of the pioneers of modernity. It reveals a positive feeling or a positive way of thinking and behavior and we cannot bring their creations under the category of achievement in any way. It is known that an attempt is being made to make the circuits and the previous parries stand in the ranks of human beings.

The interesting aspect is that the nobles despise modernity and tradition without knowing and understanding it, just like a common man despises leprosy. They consider tradition as just another name for repetition and completely forget the fact that without tradition, no new feeling, new moment or new idea can be discovered. can say. Until it is proven new against something and at the same time the criteria for declaring it new does not already exist. The new can be against the old but the new cannot be against the new.

That is why it is of fundamental importance to gain the awareness of the ancient to give birth to the new. It should be noted that tradition is not the name of the perception and feelings of static and immobile things, but it is born from the expression of the most modern feeling and behavior of all times. It happens. In our literary consciousness, only those things can survive which are the most successful expression of the specific requirements of an era.

Every era echoes the voices of thousands of writers and poets, but these thousands of people are not included in the literary tradition, but only those people. They include those who have created literature on the level of humanity and which have been accepted by people as creative works of art.

Until now, the positive and healthy expression of modernity has only been limited to the clothing that has been introduced by the new generation of girls. It has a sense of both tradition and modernity. While modernity in literature is not at this level. Just as clothing has a hold on our social and moral values ​​and this sense of beauty, but on the contrary, the status of the creative process of modernity at the literary level is still like that of a clown who wears a long hat, is colorful and fussy. He is trying to attract people to him by repeatedly beating the torn bamboo on the scaffold decorated with clothes.

Now let’s discuss the definition of Modern Literature.

Definition of Modern Literature

TS Eliot writes in his definition of modern literature

  1. The difference between the present and the past is the conscious state. In a way and to some extent it is the name of the awareness of the past. That awareness that the consciousness of the past itself cannot reveal.
  2. The first effort of the poet should be that the poem itself is clear to him and at the same time he is fully convinced that this poem is the correct result of his mental process. The worst form of ambiguity is that the poet interprets his meaning. The worst form of this is when the poet deludes himself into thinking that he has a lot to say. Even if he doesn’t have anything to say.
  3. A poet, an artist, whether he belongs to any art, does not have a complete status by himself. His importance and his greatness lie in his relationship with previous poets and artists. Keep it separate. Its importance cannot be determined by doing it. For that, it will have to compare and contrast late poets and artists.
  4. The matter of tradition is of great importance. It is not inherited, and even if one wants to acquire it, it requires great riyaz, which is mandatory for every poet who writes poetry even after the age of twenty-five.

Difference between Modern and Modernity

While writing about modernity and modernity, we generally consider both as synonyms and do not discriminate between them. However, there is a fundamental difference between the two. Every new object, concept, idea, or theory remains modern until then. is so long as it manifests only at the individual level. It is the invention or innovation of an individual and its source and the center of its influence is only its own self. And illuminates its own existence. Therefore, if one’s darkness is removed for a moment, it will be a mere coincidence.

When the modern gets the status of accepted common, it is called modernity. It is true that the source of the storm of modernity will also be an individual in the form of modernity.

Modernity is actually the result of the struggle between tradition and rebellion, beliefs and experiences, ancient and modern, and action and reaction, and in this sense, it can be called a universal mental revolution. But the mental anxiety caused by this mental revolution and its We should not ignore the various factors and motivations associated with it, that they lead to the important fact that modernity is born from its environment, time, and society, but on the contrary, if we examine our modernity, it is clear that modernity The experiments or revolts that happened in the literature on the name have been based on imported ideas, but one thing is definitely recognized that if it is slightly moist, this soil is very fertile.

You also like:  Essay on "Why is Military Training Important?" for LAT and USAT

Wherever the seedlings of ideals were brought and sown, they flourished, so that there was never a shortage of those who watered them with blood and liver. In our country, modernity is generally considered to be synonymous with the innovations of expression and the experiences of completion, although This is a very superficial expression of modernity. Modernism actually consists of ideas and expressions. Techniques and expression patterns can be borrowed from other literature, but concepts and expressions should not be spread, the angle should only be one’s own. It should not be wrong or right. It doesn’t matter.

Common symbols of modernity:

If we examine some of the writings that have been labeled modernist in the last few years, we will find the following things in common.

  1. Attempting to drag literature to the level of a newspaper column until it screams “literature” in the same way as a daily column of a newspaper screams, then literature is not “modern” in terms of “modernity”.
    A spontaneous attempt at sensationalism, intended to shock the reader, becomes an experiment.
  2. Treading and crushing the tradition and rejecting it consciously, even if the tradition is not understood, is an inevitable and delicate relationship between the subject and the hypothesis in relation to modern literature. This has been debated for many years.

With us, many writers in Urdu and regional languages ​​have written such texts, the subject of which is progressive, but there is a smudge of modernity in their writings. Their writings lack the use of symbols according to the subject.

As a result, most of these writings only became the center of attention of the “Tabqa Khawas” i.e. high level of literary taste and knowledge, but they could not gain public recognition.

These stories fail to develop an intellectual or emotional connection on any emotional level with the people they are written about.

Progress of Modernity in Pakistan

Anwar Sajjad writes in the flap of his novel Janam Roop as follows:

I know if I write like Premchand today, it will be meaningless. To write in the style of any great novelist of the past would be unproductive not only for me but for Bill’s literature in general. Like life, literature is also a dynamic and living reality where everything is evolving everywhere, how can a novel fly in one place, and become static? Literature does not exist in eternity, it lives in history. I am proud to be a writer of this age and I embrace my time.

The idea that the creative novel invents its own structure, rules, and principles is by no means a controversial issue. Anwar Sajjad did not say anything new. Writers writing in the third and fourth decades, especially the progressive writers, had this opinion. The same experiments were also done by Krishan Chandra, Ahmed Ali, and Aziz Ahmed.

Although it is not a matter of technique and structure, it is a matter of material that can fit in this new structure. Above all, it is about completion, because the completion of art, especially the completion of a novel, is a stage at which a writer is unique, and at this stage, Sajjad seems to soar ahead of his peers.

Groups Supported by Modernization

Modernism is not a local thing but an imported thing. This art is only adopted by a certain section of society as a profession. This class is the middle class of the present industrial age, which has adopted imported art like other imported things.

The personal efforts of poets and writers belonging to this group are very limited. Most of the translations are the same or their creations are generally considered to be cheating, but the original or new creation has a freshness and novelty. Even though copying is an art, even if it is translation, writing loses its illusion if it is repeated over and over again. This is the reason why there are many followers of modernism in the subcontinent, but they did not get the status that Krishna Chandra, Bedi, and Prem Chandraya Manto got.

Among the remarkable fiction writers of modernity, only three big names can be seen, who were accepted by the public. Among them, the names of Qaratul Ain Haider, Intar Hussain, and Syed Abdullah come to the fore.

However, his writings are not completely a reflection of modernity, but rather a combination of traditions is seen in them. In his writings, those confusions of communication that are considered worthy of modernity are not seen.

Criticism of Modernism of Literature

Dr. Anwar Sadid comments on modernity as follows:

“Modernity is expressed by the modern style of feeling, in which the modern style of feeling means the mental attitude of the writer, due to which his thinking is not only dissolved but also a sign for the future. For this purpose, the analytical study of the present from the right perspective is essential, but this is the most difficult task and it seems impossible in our country. Because for this analytical study, such an eye is required which can simultaneously work as a convex mirror and X-ray.

It is not an easy task to free oneself from the talisman of degenerate institutions in the name of dead traditions, styles of thinking, and social prohibitions (Taboos) and then the restrictions of the Mustazad religion on them, if it is not expedient, its style of feeling is called modern. The future of any modernity looks even bleaker that our writers are hypocrites and expedients and slaves of the times and Ibn al-Wakat, who are writers from religious organizations to critics.

Rather, even the commentators are trembling and yearning, what will he do with the times in the name of ideas? And if he cannot make even a small sacrifice for his ideals, to light the lamp of the modern style of feeling and light the torch of modernity. Where will the qualification come from?’

But our writers are so delusional about modernity that their writings have become victims of personal sentimentality and sensationalism. Fiction, novels, dramas, ghazals, poems, criticism, etc. all fall under this process.

Essay on “Modern Literature” (Urdu Version)

Find below the Essay on “Modern Literature” in Urdu Version.

          پچھلے چند سالوں سے ہمارے ہاں ادب میں ‘‘جدیدیت’’ کا لفظ بار بار استعمال کیا جا رہا ہے جس قدر اس کے استعمال میں اضافہ ہو رہا ہے ،اسی قدر اس کے مفہوم بھی بڑھ رہے ہیں۔ کثرت تعبیر سے یہ لفظ پریشان خیالی کا ہم معنی ہو کر رہ گیا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ ہر شخص اپنی کمزور صلاحیت کو جدیدیت کا نام دینے کے درپے ہے ۔ اس کوشش میں نہ سچی لگن ہے اور نہ ہی کوئی تخلیقی کارنامہ سامنے آتا ہے۔چناں چہ کوئی ایسی صورت نظر نہیں آتی جس کے تحت جدیدیت کو لوگوں میں مقبول بنایا جا سکے‘‘خیال’’ کی اگرچہ بڑی اہمیت ہے لیکن جب تک تخلیقی صلاحیت ساتھ نہ ہو تب تک ادب کو زندگی دینا مشکل ہے۔ جو زندگی کے بدلتے شعور کا نظر انداز کیے بغیر ادب تخلیق کرنے کی کوشش کرتے ہیں وہ دراصل بغیر ٹانگوں کے دوڑنے کی کوشش کرتے ہیں۔ جس طرح ہوا میں گرہ نہیں لگائی جاسکتی ، اسی طرح خلا میں ادب تخلیق نہیں ہو سکتا۔

You also like:  Essay on the "Place of Students in Building a Nation" for LAT and USAT

          ایسے میں اپنی زبان ،اپنے کلچر اور اپنے ادب سے بے تعلق ہو کر جب بھی کوئی نسل ادب تخلیق کرنے کی کوشش کرے گی ،اس کا نتیجہ وہی ہو گا جو جدیدیت کے علمبرداروں  کی ‘‘تخلیقات ’’ میں آج ہمیں نظر آتا ہے نہ اس میں کسی مثبت احساس یا مثبت طرز فکر و عمل کا پتا چلتا ہےاور نہ ان کی تخلیقات کو کسی طرح ہم کارنامہ کے ذیل میں لاسکتے ہیں۔ معلوم ہو تا ہے کہ سرکٹوں اور پچھل پیریوں کو کھینچ کھینچ کر انسانوں کی صفوں میں کھڑا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ دلچسپ پہلو یہ ہے کہ ناز برداران جدیدیت ، روایت کے نام سے بغیر اسے جانے اور سمجھے اس طرح گھن کھاتے ہیں جیسے عام انسان جذامی (کوڑھی) سے گھن کھاتا ہے۔ وہ روایت کو صرف تکرار کادوسرا نام سمجھ کر اس حقیقت کو با لکل فراموش کردیتے ہیں کہ روایت کے بغیر کوئی نیا احساس ،نیا لمحہ اور نیا خیال دریافت نہیں کیا جا سکتا ۔سوچنے کی بات  یہ ہے کہ آپ  کس چیز کو کس وقت تک نیا کہہ سکتے ہیں۔جب تک وہ خود کسی چیز کے مقابل نئی ثابت نہ ہو جائےاور ساتھ ساتھ اسے نیا قرار دینے کا معیار جواز اور بنیاد    پہلے سے موجود نہ ہو۔نیا پرانے کے مقابل نیا تو ہو سکتا ہےمگر نئے  کے مقابل نیا نہیں ہو سکتا۔

اسی لیے نئے کو جنم دینے کے لیے قدیم کا شعور حاصل  کرنا بنیادی اہمیت رکھتا ہے۔واضع رہے کہ روایت جامد اور غیر متحرک اشیا کے ادراک و محسوسات کا نام نہیں ہےبلکہ وہ تو ہر زمانے کے جدید ترین طرز احساس اور رویے کے اظہار سے پیدا ہوتی ہے۔ہمارے ادبی شعور میں وہی چیزیں زندہ رہ سکتی ہیں جو کسی زمانے کے مخصوص تقاضوں کا کامیاب ترین اظہار ہوتی ہیں  ۔ہر دور ہزاروں ادیبوں اور شاعروں کی آوازوں سے گونجتا ہےمگر ادبی روایت میں یہ ہزاروں  انسان شامل نہیں ہوتے بلکہ صرف وہی لوگ شامل ہوتے ہیں جنھوں نے ادب کو انسانیت  کی سطح پر رکھ کر تخلیق کیا ہو اور جسے لوگوں نے تخلیقی فن پارے کی صورت میں قبول کیا ہو۔

اب تک جدید کا مثبت اور صحت مند اظہار صرف لباس کی حد تک ہو سکا ہے جو نئی نسل کی لڑکیوں نے متعارف  کروایا ہے۔ اس  میں روایت اور جدیدیت  دونوں کا  شعور موجود ہے۔ جب کہ ادب میں جدیدیت اس سطح پر نہیں ۔ لباس  کی جس طرح ہماری معاشرتی اور اخلاقی اقدار پر گرفت بھی ہے اور اس احساس جمال بھی  لیکن اس کے بر خلاف ادبی سطح پر جدیدیت کے تخلیقی عمل کی حیثیت بھی ابھی تک مسخرے کی سی ہے جو لمبی سی ٹوپی پہنے ،رنگ  برنگا بے ہنگم سا لباس زیب  تن کیے  پھٹے بانس کو بار بار مچان پر مار کر لوگوں کو اسنی طرف متوجہ کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

جدیدیت کی تعریف

ٹی ایس ایلیٹ  جدیدیت کی تعریف میں لکھتا ہے

َ1۔ ‘‘حال اورماضی میں یہ فرق  ہے     شعوری  حال۔ ایک طرح سے اور کسی حد تک ماضی کی آگاہی کا نام ہے۔وہ  آگاہی جسے ماضی کا شعور بذات خود ظاہر نہیں  کر پاتا۔’’

2۔ ‘‘شاعر کی پہلی کوشش تو یہ ہونی چاہیے   کہ وہ نظم خود اس پر واضع ہو اور ساتھ ساتھ اسے اس امر کا پورا  یقین  ہو کہ یہ نظم اس کے ذہنی عمل کا صحیح نتیجہ ہے۔ابہام کی بدترین شکل  یہ ہے کہ شاعر اپنا مطلب خود پر بھی واضح نہ کر سکے۔اس کی سب سے گھٹیا شکل وہ ہے جہاں شاعر خود کو فریب دے کر سمجھنے لگے کہ اس کے پاس کہنے کے لیے بہت کچھ ہے۔ حالانکہ اس کے پاس کہنے کے لیے کچھ نہ ہو۔’’

3۔ ‘‘کوئی شاعر کوئی فنکار خواہ   وہ کسی بھی فن سے تعلق رکھتا ہو،تن تنہا اپنی کوئی مکمل حیثیت نہیں رکھتا۔اس کی اہمیت اور  اس  کی بڑائی اسی میں مضمر ہے  کہ سابق شعرا  اور فنکاروں سے کیا رشتہ ہے۔اس کو الگ رکھ کر اس کی اہمیت متعین نہیں کی جا سکتی ۔اس کے لیے اسے مرحوم شعرا اور فنکاروں کے درمیان تقابل و تفاوت کرنا پڑے گا۔’’

4۔ ‘‘روایت کا معاملہ بہت وسیع اہمیت کا حامل ہے ۔یہ میراث میں نہیں ملتی اور اگر کوئی اسے حاصل کرنا بھی چاہے تو اس کے لیے بڑے ریاض کی ضرورت پڑتی ہےجو ہر اس شاعر کے لیے لازمی ہےجو پچیس سال کی عمر کے بعد بھی شعر کہتا ہے۔’’

جدید اور جدیدیت میں فرق

جدید  اور جدیدیت کے بارے میں لکھتے  وقت  ہمارے ہاں بالعموم دونوں  کو مترادف سمجھتے ہوئے ان میں امتیاز روا نہیں رکھا جاتا۔جب کہ ان دونوں  میں اساسی نوعیت  کا فرق ضرور ہے ۔ہر نئی شے،تصور،خیال یا نظریہ اس وقت تک جدید رہتا ہے جب تک کہ اس کا صرف انفرادی سطح پر ظہور ہو۔یہ ایک فرد کی اختراح  یا جدت  ہے اور اس کا منبع  اور اس کے اثرات کا مرکز صرف اس کی اپنی ذات۔یہ جگنو کی مثال ہے جو اپنے وجود سے روشنی اخذ کرتا ہے اور اپنے وجود کو ہی روشن کرتا ہے۔ اس لیے اگر کسی کی تاریکی پل بھر کے لیے دور ہو تو یہ محض اتفاق ہو گا۔

جب جدید کو قبول عام  کا درجہ مل جائے تو وہ جدیدیت کہلاتی ہے۔ یہ بجا سہی کہ جدیدیت کے طوفان کا منبع  بھی جدید کے رُوپ میں کوئی فرد ہو گا۔لیکن اس کے‘‘ ازم  ’’بننے میں یہ عمل مضمر ہے کہ اس میں دلچسپی لے رہے ہیں ۔

جدیدیت دراصل روایت اوربغاوت،مسلمات اور تجربات ،قدیم وجدید اور عمل و ردِعمل کی کشمکش کا ثمر ہے اور اس لحاظ سے اسے واقعی ایک ہمہ گیر ذہنی انقلاب کا نام دیا جا سکتا ہے۔لیکن اس ذہنی انقلاب کے باعث بننے والے ذہنی اضطراب  اور اس سے وابستہ مختلف عوامل و محرکات نظر انداز نہیں کرنے چاہیں کہ  ان  ہی سے اس اہم حقیقت  تک رسائی ہوتی ہے کہ جدیدیت اپنے ماحول،زمانہ اور معاشرے سے جنم لیتی ہے لیکن اس کے برعکس اپنی جدیدیت کا جائزہ لیں تو واضع ہوتا ہے کہ  جدیدیت کے نام پر ادب میں جو تجربات یا بغاوتیں ہوئیں، ان کی  اساس درآمدہ نظریات پر استوار رہی ہے لیکن ایک بات تو یقیناً تسلیم شدہ ہے کہ ذرا نم ہو تو یہ مٹی بہت زرخیز ہے ساقی !

جہاں کہیں سے بھی لا کر نظریات  کے پودے بوئے گئے ، وہ بار آور ہوئے ،کہ خون جگر دے کر سینچے والوں کی کبھی بھی کمی نہ رہی تھی ۔ہمارے ہاں جدیدیت کو بالعموم اظہار کی جدتوں اور تکمیل کے تجربات کا مترادف سمجھا جاتا ہے حالانکہ جدیدیت کا یہ بہت سطحی سا اظہار ہے ۔ جدیدیت دراصل خیالات وافکار سے عبارت ہے۔تکنیک اور اظہار کے سانچے تو دیگر ادبیات سے مستعار لیے جا سکتے ہیں لیکن تصورات اور تاثرات کے لیے دامن نہیں پھیلانا چاہیے ، زاویہ صرف اپنی نظر کا ہی ہونا چاہیے۔اس کے غلط یا صحیح ہونے سے اتنا فرق نہیں پڑتا۔

You also like:  Essay on "Abolition of Bribery" for LAT and USAT

جدیدیت کی مشترک علامت:

          اگر ہم ان چند تحریروں کا جائزہ لیں جن پر گزشتہ چند برسوں میں اہل قلم نے جدیدیت کا لیبل لگایا ہے تو ہمیں مندرجہ ذیل باتیں مشترک نظر آئیں گی۔

 ادب گھسیٹ کر اخبار کے کالم کی سطح پر لانے کی کوشش جب تک ‘‘ادب پارہ’’ اسی طرح نہ چیخے چلائے جیسے کہ اخبار کا ایک روزہ کالم چیختا چلاتا ہے تو ‘‘جدیدیت’’ کے لحاظ سے ادب پارہ نہیں ہے۔

 سنسنی خیزی کی وہ خود ساختہ کوشش جس سے قاری کو چونکانا مقصود ہو ، تجربے کانام پاتی ہے۔

روایت کو روندنا اور کچلنا اور اسے شعوری طور پر رد کرنا خواہ روایت کا ادراک بھی نہ ہو ، محض جدید ادب کے حوالے سے موضوع اور مفروضے کے مابین جو ایک ناگزیر اور نازک سا رشتہ ہے۔ اس پر گزشتہ کئی برسوں سے بحث چل رہی ہے۔

          ہمارے ہاں اُردو اور علاقائی زبانوں میں بہت سے قلم کاروں نے ایسی تحریریں رقم کی ہیں جن کا موضوع تو ترقی پسند انہ ہے مگر ان کی ہیئت پر جدیدیت کی دُھندچھائی ہوئی ہے۔ان کی تحریروں میں موضوع کے مطابق علامتوں کے استعمال کا فقدان ہے۔

          نتیجتاً ان میں سے اکثر تحریریں محض ‘‘طبقہ خواص ’’ یعنی اعلیٰ درجے کے ادبی ذوق اور آگہی رکھنے والے طبقے کی توجہ کا مرکز  تو بن گئیں لیکن اُنہیں عوامی سطح پریذ یرائی حاصل نہ ہو سکی۔

          یہ کہانیاں ان لوگوں کی کسی بھی جذباتی سطح پر فکری یا جذباتی رشتہ استوار کرنے میں ناکام ہوگئیں ہیں جن سے متعلق یہ تحریر کی گئی تھیں۔

پاکستان میں جدیدیت کاا رتقا

انور سجاد اپنے ناول ‘‘جنم روپ ’’ کے فلیپ میں اس طرح لکھتے ہیں:

‘‘میں جانتا ہوں اگر آج پریم چند کی طرح لکھوں گا تو بے معنی ہوگا ۔ کسی بھی گزرے ہوئے عظیم ناول نگار کے اسلوب میں لکھنا نہ صرف میرے لئے بل کی عمومی طور پر ادب کے لئے بے ثمر ہوگا۔ زندگی کی طرح ادب بھی متحر ک اور زندہ حقیقت ہے جہاں سب طرف سب کچھ ارتقا پذیر ہوتو ناول کیسے ایک جگہ اڑ سکتا ہے، جامد ہو سکتا ہے۔ ادب ابدیت میں موجود نہیں رہتا بل کی تاریخ میں زندہ رہتا ہے ۔ مجھے فخر ہے کہ میں اس زمانے کا ادیب ہوں اور میں اپنے وقت کو قبول کرتا ہوں۔’’

یہ نظریہ  کہ تخلیقی ناول اپنے لئے ہیئت ، قوانین اور اصول خود ایجاد اکرتا ہے قطعا   ً متنازعہ مسئلہ نہیں ہے۔ انور سجاد نے کوئی نئی بات نہیں کہی ۔ تیسرے اور چوتھے عشرے میں لکھنے والے مصنفین خاص طور پر ترقی پسند مصنفین کی یہی رائے تھی ۔ یہی تجربات کرشن چندر، احمد علی اور عزیز احمد نے بھی کئے ہیں۔

          بات اگرچہ تکنیک اور ہئیت کی نہیں ہے بل کہ بات اس مواد کی ہے جو اس نئی ہئیت میں فٹ ہو سکے ۔ سب سے بڑھ کر بات تکمیل کی ہے کیوں کہ فن کی تکمیل بطور خاص ، ناول کی تکمیل ایسا مرحلہ ہے جس پر آکر ایک مصنف سے منفرد ہو تا ہے، اور اسی مرحلے پر سجاد اپنے دوسرےساتھیوں سے آگے پر پھڑ پھڑاتے نظر آتے ہیں۔

جدیدیت کے حمایت یافتہ گروہ

جدیدیت کوئی مقامی چیز نہیں بل کہ ایک درآمد شدہ چیز ہے ۔اس فن کو معاشرے کی صرف ایک مخصوص طبقے نے بطور شغل اپنا رکھا ہے۔ یہ طبقہ موجودہ صنعتی دور کا متوسط طبقہ ہے جس سے دوسری امپوٹڈ چیزوں کی طرح درآمدی فن کو گھی اختیارکر لیا ہے۔

اس گروہ سے تعلق رکھنے والے شعرا اور ادبا کی ذاتی کاوشیں بہت محدود ہیں۔ زیادہ تر تراجم ہی ہیں یا ان کی تخلیقات پر بھی عام طور پر نقل کا گما  ن ہوتا ہے تاہم اوریجنل یا نئی تخلیق میں ایک تازگی اور نیا پن ہوتا ہے ۔ نقل کرنا بھی اگرچہ فن ہے خواہ وہ ترجمہ ہی کیوں نہ ہو ، تحریر اگر بار بار دوہرائی جائے تو اپنا بھرم کھو دیتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ جدیدیت کی پیروی کرنے والوں کی اگر چہ برصغیر میں کثیر تعداد موجود ہے لیکن ان کو وہ مقام حاصل نہ ہوا، جو کرشن چندر ، بیدی ،پریم چندریا منٹو کو حاصل ہوا۔

          جدیدیت  کے قابل ذکر افسانہ نگاروں میں صرف تین بڑے نام نظر آتے ہیں جن کو عوام میں پذیرائی ملی ۔ ان میں قرۃالعین حیدر، انتظار حسین اور سید عبد اللہ کے نام منظر پر آتے ہیں۔

          تاہم ان کی تحریریں مکمل طور پر جدیدیت کا آئینہ نہیں بل کہ ان میں روایات کا امتزاج بھی نظر آتا ہے۔ ان کی تحریر وں میں ابلاغ کی وہ اُلجھنیں نظر نہیں آتیں جو جدیدیت میں قابلِ توصیف سمجھی جاتی ہیں۔

جدیدیت پر تنقید

ڈاکٹر انور سدید  جدیدیت پر اس طرح رائے  دیتے ہیں ۔

‘‘جدیدیت کا اظہار  جدید طرزِاحساس  سے ہوتا ہے جس میں جدید طرزِ احساس سے ادیب کا وہ ذہنی رویہ مراد لیتا ہے جس کے باعث اس کی سوچ کی تحلیل  ہی نہیں ہوتی بل کہ مستقبل کے لیے اشارہ بھی بنتی ہے ۔ اس مقصد  کے لیے حال کا درست تنا ظر میں تجزیاتی مطالعہ اساسی حیثیت رکھتا ہے لیکن یہی سب سے مشکل کام ثابت ہوتا ہے اور ہمارے ملک میں تو  نا ممکنات میں سے نظر آتا ہے۔ اس لیے کہ اس تجزیاتی مطالعہ کے لیے ایسی نگاہ درکار ہوتی ہے  جو بیک وقت محدب شیشہ اور ایکس ریز کا کام کر سکے ۔ ماضی کی مردہ روایات ،سوچ کے کہنہ اسالیب اور سماجی تحریمات   کے نام پرانحطاط پذیر اداروں کے طلسم سے آزاد ہونا کوئی آسان کام نہیں ہوتا اور پھر ان پر مستزاد مذہب کی قدغن ، مصلحت نہ ہو تو اس کا طرزِ احساس جدید کہا جا سکتا ہے اور نہ ہی اس کی سوچ و افکار کسی جدیدیت کا مستقبل اور بھی تاریک نظر آتا ہے کہ ہمارے ادیب منافق بھی ہیں اور مصلحت پسند بھی اور زمانے کے غلام بھی ہیں اور ابن الوقت  بھی ۔جو ادیب مذہبی تنظیموں سے لے کر ناقدین بل کہ تبصرہ نگاروں تک سے لرزاں و ترساں ہو وہ افکار کے نام پر بھلا زمانے سے کیا ٹکرائے گا۔اور اگر وہ اپنے ادرش کے لیے معمولی سی قربانی بھی نہیں دے سکتا تو جدید طرزِ احساس کے چراغ فروزاں کرنے اور   جدیدیت کی مشعل روشن کرنے کی اہلیت  کہاں سے لائے گا؟’’

لیکن ہمارے لکھنے والے جدیدیت کے تعلق سے ایسے فریب میں مبتلا ہیں کہ ان کی تحریریں محض ذاتی جذباتیت اور سنسنی خیزی کا شکار  ہو گئی ہیں۔اس عمل کی زد میں افسانہ،ناول،ڈرامہ،غزل،نظم اور تنقید وغیرہ سب آتے ہیں ۔

Find Relevant Posts:

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x