Essay on “Importance of Discipline in Life” for LAT and USAT

Do want to know about the Importance of Discipline in Life?

Here you will find an Essay on “Importance of Discipline in Life” for LAT and USAT examinations. We have arranged it in both Urdu and English Languages.

Essay on “Importance of Discipline in Life” (English Version)

The word poem is used in contrast to prose. In prose, the purpose is stated in one sentence or a few sentences. But they do not take into account the closures of Radif rhymes and word order. While the words in the poem are arranged in a certain order. In which the biggest thing can be explained with the least words. Discipline in life refers to living life according to a certain law and order. A life with more positive aspects and less waste of time.

If we look at the vastness of the Kargaha universe, everything in it from the sky to the earth is active under a certain rule and law. It is a country-wide gathering where the mountains are billowing and the murmuring rivers are gurgling in the red of the clouds, the rain is pouring down, the sun is rising from the east in the morning and set in the west in the evening giving a henna color to the hills and valleys.

Moon benefits the universe with its cool and refreshing moonlight at its appointed time. Stars disappear from the eyes while guiding the lost wayfarers from their own passages. Fragrant, dewy breezes beautify the misty faces of flowers, cascades of water from mountain heights, and creating a melodious vibration in the air are manifestations of great discipline. The beauty of the universe, this beauty and beauty, and this grace and grace should end in a single moment, if its order is disturbed, the name of the breaking of this system and rule is death. 

What is life? What is death is the disturbance of these elements If the internal universe of the human being is considered, its structure and structure are thought about, then it will be known that its organs and tissues, muscular system, nervous system, blood circulation, veins, and fibers are interconnected and interconnected with the heartbeat, mental alertness, eyesight, ear hearing, nose strength, tongue taste, etc. perform their respective functions with a special and more appropriate method.

From which birth and evolution and health and energy come into action. If none of these organs do their job, not only life become miserable but impossible. Health and life must be fulfilled by all the organs while living within their respective limits.

 After the creation of Adam, God started a series of prophets to guide him. time, Therefore, in every country and every city where there was a population, He gave through the Prophets (peace be upon him) a coherent system to give a special order to their collective system, which is difficult to find a precedent. In this collective and individual life, there is a beautiful combination of discipline that the human mind is amazing. In front of you, some of the brilliant principles and regulations of Islam are being presented regarding discipline.

Salat (Prayer)

Prayer is a manifestation of Islam’s code of life. In which the five times of fasting at the same time under the guidance of an Imam, the rich and the poor, rising above the regional and linguistic prejudices and standing in the same line to serve Allah Almighty, I like the charming scene. It is of great importance in the evolution of the collective life of Muslims. This prayer has established continuity in punctuality, obedience, human equality, and harmony of thought and vision. Due to the fact that this orderly process of prayer covers all areas of life, it becomes a source of discipline in the life of Muslims. And this process causes human welfare and evolution.

Fasting (Roza)

Like prayer, fasting also creates a certain discipline in a person’s life. Eating food at a specific time and staying hungry for a specific time is a manifestation of purity in oneself and in one’s thoughts and eyes. This effort is the cause of creating balance in society. They create discipline in human life. The political discipline of Islam was the result of ignorance and the blind constitution of the ancestors. Where girls were buried alive, where alcoholism and adultery were the norms every day, where circumambulation was performed, as a result of the organized and coordinated struggle of a few individuals, a society was achieved in which freedom and vision were achieved. Tribal prejudices were buried for women’s rights. How this all happened is due to discipline.

Every aspect of life requires discipline. If the example of the army is taken, it becomes clear to us that if there is no discipline in the army, then a large force cannot stand even against a small force, but if the army organizes a group of a few trained people. If given, they can withstand even the biggest storms.

In the same way, if the educational institutions are evaluated, it is estimated that if the students and teachers do not come to the educational institution on time and study the relevant subjects on their own time, then the effort to acquire education can never be successful. Take the example of a house if the head of the house is responsible for taking care of external affairs and solving problems.

You also like:  Essay on the "Unity of the Islamic World" for LAT and USAT

If these two parties do not fulfill their respective responsibilities according to their prescribed social discipline, the car of the house cannot move even a step. There is no area of ​​life in which success can be achieved without discipline.

The history of the world’s rise and fall is testifying that for those who maintained discipline in their ranks, success, and success, their master created chaos and disunity by eliminating discipline, humiliation, and silence. No one could save it.

Organized, united, and integrated people have always won over the crowd of chaotic, uncoordinated, unorganized people. If obedience and discipline were taken care of, then in the battle of Badr, for example, 313 Muslims defeated an armed army of 1000 infidels. When obedience to Amir was not fully implemented, in the case of the Battle of Uhud, a complete victory was turned into a defeated victory, in which the body of Prophet Muhammad (peace be upon him) suffered countless wounds and suffered immense casualties. 

Therefore, it is a settled fact that even the nations that have created discipline in their ranks will reach their peak, the people will deviate from this golden rule of life, humiliation, disgrace, ignorance, poverty, disease and Iniquity will be their destiny.

If we are willing to make ourselves accountable, then this fact will be revealed to us that the Shiraz of our entire nation has been dispersed. No sphere of life is bound by the chain of disciplined ceremonies. First of all, if you look at the patriarchal government and the intellectuals, the history of Pakistan shows that the looting of the government has widened the looting of the economic classes.

The justice system has become nothing more than a spectacle. The police and administration use the business state for their own benefit to send Taif for Hajj with the funds of the ruling class and the pilgrims feel proud of themselves. Sir, there is no cry of the powerful circle, all the politicians are opening their own shops in the name of democracy, to overthrow the government, to protect their interests, and to trap the common people in the dark, their duty is democracy.

It would be unfair not to mention scholars and scholars. This lofty and sacred group is a pure and holy group, on whose raised eyebrows people make sacrifices of their lives in regard to sanctity. Fully aware. It is only for the protection of the interests of the students other than their own ambitions and positions. So someone is occupying the hearts and minds of the people in the circle of the Wilayat, considering it as their monopoly.

There is a ban on thinking and looking. Fatwa is common. There is a contradiction in words and deeds. This group of so-called elders who organize and regulate the entire nation is the cause of chaos and division among the people. Sectarianism is being fueled. The murder market is hot. Distance from research. They are ignorant of superficial knowledge. In these circumstances, if one dreams of rising, it can be called nothing but self-delusion.

The seriousness of the situation has become so serious that now everyone is keeping an eye on the political, religious, and economic affairs of the government. has been that will burst like a storm and sweep away these evil attitudes and statistics. And again it will be Shirazbandi of the nation. In this, freedom of thought and vision will be created as well as harmony.

The balance of rights and duties will be restored. The Justice system, education system, and health system will be organized and coordinated. After that, we will be able to be counted among developed nations. The people we are currently ruling have this rare quality that the whole nation is organized like the grains of a hymn. Because of this, he is a superior nation and we are a subordinate nation due to dispersion. Discipline has to be established in order to dominate.

Essay on “Importance of Discipline in Life” (Urdu Version)

Find below the Essay on “Importance of Discipline in Life” in Urdu Version.

نظم کا لفظ نثرکے مقابلے میں استعمال کیا جاتا ہے۔ نثر میں ایک فقرے میں یا چند فقروں میں مقصد بیان کیا جاتا ہے۔ لیکن ان میں ردیف قافیہ کی بندشیں اور لفظ کی ترتیب کا خیال نہیں رکھا جاتا آتا۔ جب کہ نظم میں الفاظ کو ایک خاص ترتیب سے رقم کیا جاتا ہے۔ جس میں کم سے کم الفاظ سے بڑی سے بڑی بات سمجھائی جا سکتی ہے۔ زندگی میں نظم و ضبط سے مراد زندگی کو ایک خاص قانون قاعدے اور سلیقے سے گزارنا ہے۔ ایسی زندگی جس کے مثبت پہلو زیادہ نمایاں ہو اور وقت کا کم سے کم ضیاع ہو۔

اگر کارگہہ کائنات کی وسعتوں پر نظر ڈالی جائے تو آسمان سے زمین تک جو کچھ اس میں ہے ایک خاص قاعدے اور قانون کے تحت سرگرم عمل ہے۔ ہے ملک گیر اجتماع پہاڑ بل کھاتی اور گنگناتی ندیاں بادلوں کی سرخی میں گھنگھور گھٹائیں، بارش کا چھم چھم برسنا، سورج کا صبح کے وقت مشرق کی طرف سے نمودار ہونا اور شام کو گل و گلزار کو حِنائی رنگ دے کر مغرب میں غروب ہو جانا۔ چاند کا اپنے وقت مقرر پر اپنی ٹھنڈی اور تروتازہ چاندنی سے کائنات کو مستفید کرنا ستاروں کا اپنی اپنی گزرگاہوں سے گم کردہ راہ مسافروں کی رہنمائی کرتے ہوئے آنکھوں سے اوجھل ہوجانا مختلف رنگوں کے پھولوں کا مختلف موسموں میں مختلف خوشبوؤں اور اپنی خزیوں سے فضاؤں کو معطر کرنا، شبنمی ہواؤں کا پھولوں کے دھندلکے چہروں کو نکھارنا پہاڑوں کی بلندیوں سے پانیوں کے جھرنوں کا گزرنا، اور فضا میں مترنم ارتعاش پیدا کرنا ایک بڑے نظم و ضبط کا مظہر ہے۔ کائنات کی خوبصورتی یہ حسن و جمال اور یہ لطافت و رعنائی ایک ہی لمحے میں ختم ہو جائے اگر اس کے نظم و ضبط میں خلل واقع ہو جائے اس نظام و قاعدے کے ٹوٹ جانے کا نام موت ہے۔

You also like:  Essay on "Problems Facing by Muslim Ummah" for LAT and USAT

زندگی کیا ہے عناصر میں ظہور ترتیب

موت کیا ہے انہی اجزا کا پریشان ہونا

اگر انسانی ذات کی داخلی کائنات پر غور کیا جائے اس کی ہئیت و تدبرو تفکر کیا جائے تو معلوم ہوگا کہ اس کے اعضاء و جوارح، اس کا عضلاتی نظام، اعصابی نطام، خون کا گردش کرنا، رگ و ریشہ کا آپس میں ملاپ و اتصال، دل کی دھڑکن، دماغ کی فکر انگیزی، آنکھوں کا بینائی، کانوں کی سماعت، ناک کی قوت تسامہ، زبان کی وقت ذائقہ وغیرہ ایک خاص اور موزوں تر تیب سے اپنے اپنے افعال سر انجام دیتے ہیں۔ جس سے پیدائش و ارتقا اور صحت و توانائی عمل میں آتی ہے۔ اگر ان اعضاء میں سے کوئی بھی اپنا کام نہ کرے تو نہ صرف زندگی وبال بن جاتی ہے بلکہ محال ہو جاتی ہے۔ تما اعضاء کا اپنے اپنے مدارو حدود میں رہتے ہوئے اپنے کاموں کو پوری طرح سے ادا کرنا ہی بنائے صحت و زندگی ہے۔

خدائے لم یزل میں تخلیق آدم کے بعد اس کی رہنمائی کے لیے انبیاء کرام علیہ السلام کا سلسلہ شروع کیا۔ وقتا؟؟ قوقتا ہر ملک اور ہر شہر میں جہاں آبادی موجود تھی آپ نے انبیائے کرام علیہم السلام کے ذریعے ان کے اجتماعی نظام کو ایک خاص ترتیب دینے کے لیے ایک ایسا مربوط نظام دیا جس کی نظیر ملنا مشکل ہے۔ اس اجتماعی و انفرادی زندگی میں نظم و ضبط کا خوبصورت امتزاج ملتا ہے کہ انسانی عقل حیرت میں ڈوب جاتی ہے۔ آپ کے سامنے اسلام کے چند درخشندہ تابندہ اور تابناک اصول و ضوابط نظم و ضبط کے حوالے سے پیش کیے جا رہے ہیں۔

صلوۃ

نماز کی ادائیگی اسلام کے ضابطہ حیات کی مظہر ہے۔ جس میں پانچ وقت پابندی ایک ساتھ ایک امام کے اقتدا میں امیر و غریب رنگ و نسل اور علاقائی اور لسانی تعصبات سے بلند ہو کر ایک ہی صف میں کھڑے ہو کر اللہ تعالی کی بندگی بجا لانے کا دلکش و دلفریب منظر کو اچھا لگتا ہے بلکہ مسلمانوں کی اجتماعی زندگی کے ارتقا میں بڑی اہمیت ہے۔ یہ نماز وقت کی پابندی امراؤ اطاعت مساوات انسانی اور فکر ونظر کی ہم آہنگی میں ایک تسلسل قائم کیے ہوئے ہے۔نماز کا یہ ترتیبی عمل زندگی کے تمام شعبوں پر محیط ہونے کی وجہ سے مسلمانوں کی زندگی میں نظم و ضبط کی خوگر ہو جاتی ہے اور یہی عمل انسانی فلاح و ارتقاء کا سبب بنتا ہے۔

روزہ

نماز کی طرح روزے بھی انسان کی زندگی میں ایک خاص نظم و ضبط پیدا کرتے ہیں۔ ایک خاص مقرر وقت پر کھانا کھانے اور ایک خاص وقت تک بھوکے رہ کر اپنے اور اپنے فکر و نظر میں پاکیزگی کی نمود یہ کوشش معاشرے میں توازن پیدا کرنے کا باعث ہے نماز اور روزے کی طرح تمام عبادات و فرائض انسانی ذات کی تکمیل کے لیے انسانی زندگی میں نظم و ضبط پیدا کرتے ہیں۔ اسلام کے سیاسی نظم و ضبط کا نتیجہ تھا کہ جہالت اور اجداد کے اندھے آئین نے ڈیرے ڈالے ہوئے تھے۔ جہاں بچیوں کو زندہ درگور کیا جاتا تھا، جہاں شراب و زنا ہر روز کا معمول تھا، جہاں کا طواف برما کیا جاتا تھا، وہاں پر چند اشخاص کی منظم و مربوط جدوجہد کے نتیجہ میں ایک ایسا معاشرہ تکمیل پایا جس میں آزادی و نظر کی شمع فروزاں ہوئی خواتین کے حقوق کے لیے گئے قبائل کے تعصبات دفن کر دیے گئے۔ یہ سارا کچھ کیسے ہوا یہ سارا کچھ نظم و ضبط کا مرہون منت ہے۔

زندگی کا ہر گوشہ نظم و ضبط کا متقاضی ہے. اگر فوج ہی کی مثال لی جائے تو ہم پر واضح ہوجاتا ہے کہ اگر فوج میں نظم و ضبط نہ ہو تو کسی بڑی قوت تو کیا وہ کسی چھوٹی قوت کے سامنے بھی ٹھہر نہیں سکتی لیکن عسکرے تربیت یافتہ چند افراد کے گروہ کو اگر منظم کر دیا  جائے تو وہ بڑے سے بڑے طوفانوں کا مقابلہ بھی کر لیتے ہیں۔ اسی طرح تعلیمی اداروں کا جائزہ لیا جائے تو اندازہ ہوتا ہے کہ اگر طلباء و اساتذہ وقت پر تعلیمی ادارے میں نہ آئیں اور اپنے اپنے وقت پر متعلقہ مضامین کا مطالعہ یہ کیا جائے تو حصول تعلیم کی کوشش کبھی کامیاب نہیں ہو سکتی۔ ایک گھر کی ہی مثال لے اگر گھر کا سربراہ جس کی ذمہ داری بیرونی معاملات کی نگہداشت ہوتی ہے اور مسائل کو حل کرنا ہوتا ہے۔ اگر یہ دونوں فریق اپنی اپنی ذمہ داری اپنے مقرر کردہ سماجی نظم و ضبط کے مطابق ادا نہ کرے تو گھر کی گاڑی ایک قدم بھی بھی نہیں چل سکتی۔ زندگی کا کوئی بھی شعبہ ایسا نہیں ہے جس میں نظم و ضبط کے بغیر کامیابی حاصل کی جا سکے۔

You also like:  Essay on "Why is Military Training Important?" for LAT and USAT

تاریخ عالم کے عروج و زوال اس بات پر گواہی دے رہے ہیں کہ جن کو عوام میں اپنی صفوں میں نظم و ضبط کو قائم رکھا کامیابی و کامرانی ان کا مالک نے نظم و ضبط کو ختم کرکے انتشار و افتراق پیدا کیا ان کو ذلت اور مسکنت سے کوئی نہیں بچا سکا۔ 

بے ہنگم غیرمربوط غیر منظم انسانوں کے انبوہ کثیر اور جم غفیر پر متحد و منظم یکجا اور مربوط افراد نے ہمیشہ فتح حاصل کی ہے۔ اگر اطاعت امیر اور نظم و ضبط کا خیال رکھا گیا تو جنگ بدر میں نئی مثلا 313 مسلمانوں نے 1000 کفار کے مسلح لشکر کو شکست فاش دی۔ جب اطاعت امیر پر پوری طرح عملدرآمد نہ ہوا تو جنگ احد کی صورت میں ایک مکمل فتح شکست خوردہ فتح میں تبدیل ہوگئی گئے اس میں حضرت محمد ﷺ کے جسم اطہر پرشمار زخم آئے اور بے تحاشہ جانی نقصان اٹھانا پڑا۔ اس لیے یہ ایک طے شدہ حقیقت ہے کہ جو اقوام بھی اپنی صفوں میں نظم و ضبط پیدا کر لی گئ وہ بام عروج تک پہنچ جائیں گی جو عوام زندگی کے اس سنہرے اصول سے انحراف کریں گی ذلت و رسوائی تو جہالت تنگدستی و بدحالی بیماری و بدکاری اس کا مقدر ہو گا۔

اگر ہم بزم خواہش اپنا احتساب کریں تو یہ حقیقت ہم پر منکشف ہوجاتی ہے کہ ہماری پوری قوم کا شیرازہ منتشر ہو چکا ہے۔ زندگی کا کوئی شعبہ بھی نظم و ضبط کی تقریبات لائی زنجیر میں جکڑا ہوا نہیں ہے۔ سب سے پہلے کار پدرازان حکومت اور صاحبان عقل و عقد کو دیکھیں تو پاکستان کی تاریخ بتاتی ہے کہ حکومتی لوٹ کھسوٹ نے معاشی طبقات کی لوٹ کو اور وسیع کر دیا ہے۔ نظام عدل ایک کھیل تماشے سے بلند کوئی چیز نہیں رہی۔ پولیس اور انتظامیہ کاروبار ریاست کو اپنی منفعت کے لیے استعمال کرتی ہیں مقتدر طبقہ کے فنڈ سے حج کے لئے طائف بھیجنا اور جانے والے خود اپنی ذات پر فخر محسوس کرتے ہیں۔ جناب مقتدر حلقے کا رونا نہیں تمام سیاستدان جمہوریت کے نام پر اپنی اپنی دکان کھولے بیٹھے ہیں حکومت کو گرانا ضد کرنا اپنے مفادات کا تحفظ کر دھندوں میں سادہ عوام کو پھنسا لینا ان کا فرض جمہوریت ہے 

علماء و مشائخ کا ذکر نہ کرنا انصاف سے صرف نظر ہوگا یہ بلند و بالا منظرا مطاہر پاکیزہ و مقدس گروہ ہے جن کے جنبش ابرو پر لوگ تقدس کے حوالے سے جانوں کے نذرانے پیش کرتے ہیں لیکن اب عوام ان کی ملمع سازی کریں اور بناوٹ سے پوری طرح آگاہ ہو گئے ہیں۔ یہ صرف اپنی جاہ طلبی اور منصبی طلبہ کے علاوہ مفادات کے تحفظ کے لیے ممبر رسول خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم ہے۔ تو کوئی ولایت کے چکر میں عوام کے دل و دماغ پر اپنی اجارہ داری سمجھتے ہوئے قابض ہے۔ فکر و نظر پر پابندی ہے۔ فتوی گری عام ہے۔ قول و فعل میں تضاد ہے۔ پوری قوم کو منظم اور و منضبط کرنے والا نام نہاد بزرگوں کا یہ گروہ عوام میں انتشار و افتراق کا باعث ہے۔ فرقہ واریت کو ہوا دی جا رہی ہے۔ قتل و غارت گری کا بازار گرم ہے۔  تحقیق سے دوری ہے۔ سطحی علم پر نازاں ہیں۔ ان حالات میں اگر کوئی عروج کا خواب دیکھے تو اس کو خود فریبی کے سوا کچھ نہیں کہا جا سکتا۔

حالات کی سنگینی اس قدر شدت اختیار کر گئی ہے کہ اب ہر کسی کو اب ہر کس و ناکس حکومتی سیاسی مذہبی اور معاشی معاملات پر نگاہ رکھے ہوئے ہیں تمام طبقات کی منہوس مکروہ اور انسانیت سوز کروایا اب عوام کے سامنے ہیں عوام کے اندر ایک پھل رہا ہے جو ایک طوفان کی طرح پھٹے گا اور ان بدکردار رویوں اور شحصیات کو بہا کر لے جائے گا۔ اور پھر سے وہ قوم کی شیرازہ بندی ہوگی۔ اس میں فکر و نظر کی آزادی کے ساتھ ساتھ ہم آہنگی بھی پیدا کی جائے گی۔ حقوق و فرائض کا توازن بحال کیا جا ئے گا۔ نظام عدل، نظام تعلیم اور نظام صحت کو منظم و مربوط بنایا جائے گا۔ اس کے بعد ہم ترقی یافتہ قوموں میں شمار ہونے کے قابل ہوسکیں گے۔ جواقوام اس وقت  ہم پرحکمرانی کر رہے ہیں ان میں یہی جوہر نایاب موجود ہے کہ پوری قوم ایک تسبیح کے دانوں کی طرح منظم ہے۔ جس کے طفیل وہ بالادست قوم ہے اور ہم منتشر ہونے کے باعث زیر دست قوم ہیں۔ بالادست ہونے کے لیے نظم و ضبط کو قائم کرنا ہوگا۔

Find Relevant Posts:

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x