Essay on “Hard work is the Key to Success” for LAT and USAT

Do want to know that Hard work is the Key to Success? Without hard work, no man could get success. That’s why it is an important part of our daily life. Here you will find an Essay on “Hard work is the Key to Success” for LAT and USAT examinations. We have arranged it in both Urdu and English Languages.

Essay on “Hard work is the Key to Success” (English Version)

Every person’s perspective on life is unique and different. Some people think that the purpose of life is the first luxury and happiness and expansion, while some people are of the opinion that life is the name of a meaningless thing. There is also such a group. Who says that the entire universe is bound by the laws of nature?

Acting under the iron law of coercion. In this way, the human being as a part of this universe is in the grip of oppression. It has no power over its own birth and death. Similarly, it is compelling and influential in all areas of life. Therefore, this life is based on oppression.

If the facts of life are looked at from a researcher’s perspective, the fact becomes self-revealing that life is the name of constant struggle, effort, and action. That is, life is the name of difficult, precise, and difficult paths.

The people who continue to walk on the steep and winding paths and remain determined on the journey without needing water, then the destinations themselves advance and welcome them and these people are blessed with eternal life. The names of such brave and determined figures live on forever.

Life is the name of ups and downs, ups and downs. In this universe, people of every mood and town are acting from their own point of view. Sometimes this life and universe become a paradise and sometimes hell. Sometimes this universe becomes a place of light, even then it sinks into darkness and darkness. In this way, despair, hope, and despair go hand in hand. Some people are frightened by this tyrannical atmosphere of oppression, but Ahmed Faraz calls them to be inclined towards action.

There is a secret treasure hidden inside every person. There are many eternal gems hidden in it. It is imperative to continuously struggle for their appearance. Internal and external resistance, the figure serves as a model for determination and courage, and from the conflict, struggle, and conflict that increases the colors of every ability.

In this highway of life, there are also people who lack abilities. But such healthy people are willing to walk on the crutches of others despite being healthy. Always look with a confused and tempted eye for help and support from others and do not find the courage to move forward within yourself. They beg from others for Jannat Badaman and Jannat Nazir’s life for themselves.

Life is reduced to motion and heat. If movement stops, life ceases to be life and becomes death. An example of this is that if life-giving and life-giving water is left in a pond, after a few days, instead of being life-giving, the same water becomes deadly and deadly. In the same way, individuals or nations who become stagnant in their action forces lose their action force and decay occurs in their action forces.

If viewed from a religious point of view, Islamic teachings have valued the hard worker. When the Holy Prophet saw or met a laborer, he used to show great respect to him. Once a laborer came to serve him. There were black marks on his hands.

Khatam-ul-Nabieen ﷺ inquired about what happened to my hands, so he told me that while working hard, my hands got blisters after blisters. Due to which black marks have formed on the hands. The last of the Prophets, peace be upon him, went forward and kissed his hands. This style of respect for a worker can only be owed to a great personality.

You also like:  Essay on the "Unity of the Islamic World" for LAT and USAT

He was a moving commentary and interpretation of the Holy Qur’an from Khatam-ul-Nabieen. That verse of the Holy Qur’an was always in view that for a man what he does is what he does. Hazrat Khatam-ul-Nabieen ﷺ played a great role in every stage of his life by the side of his companions in struggle and action.

The Prophet’s Mosque is under construction. Imam al-Anbiya, Fakhr al-Bazayat, and the Prophet of the end of time ﷺ were carrying stones with their hands and playing their role in the construction of the mosque. Similarly, on the occasion of Jang Khandaq, he was busy digging a trench with a hoe along with his colleagues. The companions were dying of hunger and thirst.

The hard rocks were the obstacles that the Messenger of Allah, peace, and blessings be upon him, used to crush with his blows. As long as the deeds of the Messenger of Allah (peace be upon him) remained Masood, the greatness of the laborers was put to four moons, that there is greatness in hard work.

These qualities of great character and rays of greatness and majesty are also found in the character of other Prophets and Companions. This world is forced to give a special place to colored workers. The afterlife also revolves around action and struggle.

If you look through the windows of the past or turn the pages of human history. It will be evident that the nations and countries who have worked hard and continuously struggled. They have reached from the bottom of humiliation to the highest peak and those who showed laziness, tolerance, negligence, humiliation, and disgrace are their destiny.

If the history of Islam is studied impartially, it is known that as long as Muslims are active in other life-giving sciences and arts apart from conquering the universe with interest and entertainment, they will get thrones, crowns, wealth, honor, and status. Jah and Hashmat remained the servants of his house.

When carelessness, prejudices, egotism, and indulgence took hold over them, who could stop the course of decline? In addition to poverty, poverty, slavery, disease, honor, and dignity also declined.

If a nation wants to regain its lost position, it has to rise to the top through hard work. As many great people have passed in the world. Looking into their past, it is known that their rise is due to their continuous effort, day and night hard work, and hard work. He kept walking on the rocky rocks of life.

Farhad always released streams of milk. With their determination and courage, they turned the impossibility into possibilities, and in this way, these mountains of determination and courage will continue to act as a torch for the weak-hearted and hopeless people.

So this is an Essay on Essay on “Hard work is the Key to Success” for LAT and USAT. Let’s see it Urdu version.

Essay on “Hard work is the Key to Success” (Urdu Version)

مید ان زندگی    میں  نہیں   بیٹھنے   سے     کام
گر   پاؤں    ٹوٹ  جائیں    یہاں    سر کے  بل چلو

زندگی کے بارے میں ہر شخص کا نقطہ نظر جدا گانہ اور مختلف ہے ۔ کچھ لوگ زندگی کا مقصد اولین عیش و عشرت اور فرحت و انبساط ہی سمجھتے ہیں جب کہ کچھ لوگوں کا مؤقف ہے کہ زندگی بے معنی چیز کا نام ہے۔ ایک ایسا گروہ بھی موجود ہے ۔ جو کہتا ہے کہ چوں کہ پوری کائنات قوانین فطرت میں جکڑی ہوئی ہے ۔ جبر کے آہنی قانون کے تحت چل رہی ہے۔ اس طرح انسان بھی اس کائنات کے ایک جز کی حیثیت سے جبر کے شکنجے میں کسا ہوا ہے۔ یہ اپنی پیدائش اور موت پر قدرت نہیں رکھتا ہے۔ اسی طرح یہ زندگی کے تمام گوشوں میں مجبور ومقہور ہے۔ اس لیے یہ زندگی جبر پر موقوف ہے۔ اگر زندگی کے حقائق کو بنظر محقق دیکھا جاۓ تو حقیقت خودمنکشف ہو جاتی ہے کہ زندگی جہد مسلسل ،سعی پیہم اور عمل متواترہ کا نام ہے ۔ یعنی زندگی مشکل ، دقیق اور کٹھن راستوں         کا نام ہے۔ جو افرادان پرخار اور پرپیچ راستوں پر مسلسل چلتے رہتے ہیں اور آہلہ پانی سے بے نیاز عزم سفر پر قائم رہتے ہیں تو منزلیں خود آگے بڑھ کر ان کا استقبال کرتی ہیں اور ان افراد کو حیات جاوداں نصیب ہوتی ہے۔ ایسے جرات مند اور عزم و ہمت کے پیکروں کے نام نامی تادم بقائے حیات قائم رہتے ہیں۔ بقول شاعر

You also like:  Essay on the "co-Education" for LAT and USAT

میدان    زندگی    میں   نہیں   بیٹھنے   سے   کام
گر پاؤں   ٹوٹ  جائیں یہاں سر کے  بل  چلو

زندگی نشیب وفراز ، مد و جز بر او عروج و زوال کے مرقع کا نام ہے۔ اس کائنات میں ہر مزاج اور نگر کے افراد اپنے اپنے نقطہ نظر سے عمل پیر اہیں۔ کبھی یہ زندگی اور کائنات جنت بداماں اور کبھی جہنم نظیر بن جاتی ہے۔ کبھی یہ کائنات بقعہ نور بن جاتی ہے تو بھی تاریکیوں اور اندھیروں میں ڈوب جاتی ہے۔ اس طرح قنوطیت در جائیت ، امید و نا امیدی ساتھ ساتھ چلتی ہیں۔ کچھ لوگ ظلم کے اس تیرہ و تار ماحول سے گھبرا جاتے ہیں لیکن احمد فراز انھیں عمل کی طرف مائل بہ عمل کرتے ہوئےکہتے ہیں۔

شکوہ  ظلمت  شب سے  تو     کہیں    بہتر  تھا
اپنے   حصے کی  کوئی   شمع  جلاتے   جاتے

ہرشخص کے اندر ایک مخفی خزانہ چھپا ہوا ہوتا ہے ۔ اس کے اندر بے شمار جواہر لازوال پنہاں ہوتے ہیں۔ جن کی نمود کومسلسل جدوجہد کرنا امر لازمی ہے۔ اندرونی و بیرونی مزاحمت ، پیکر عزم و ہمت کے لیےصیقل کا کام کرتی ہے اور اس کشمکش ، کشاکش اور ٹکراؤ سے جو ہر قابل کی رنگینیوں میں اضافہ ہوتا ہے۔

نامی     کوئی    بغیر   مشقت   نہیں    ہوا
سو    بار جب  عقیق      کٹا   تب   نگیں    ہوا

اس شاہراہ حیات میں ایسے افراد بھی ہوتے ہیں جن میں صلاحیتوں کا فقدان ہوتا ۔ لیکن ایسے چنگے بھلے صحت مند ہونے کے باوصف دوسروں کی بیساکھیوں پر چلنے کے خواہش مند ہوتے ہیں ۔ دوسروں سے مدد اور تعاون کے لیے ہمیشہ  ملتجی اور للچائی ہوئی نظروں سے دیکھتے ہیں اور اپنے اندر آگے بڑھنے کا حوصلہ نہیں پاتے ہیں۔ اپنے لیے جنت بداماں اور جنت نظیر زندگی کے لیے اوروں سے بھیک مانگتے ہیں ۔

ہمت ہو   تو  پیدا   کر  فردوس بریں  اپنی
مانگی   ہوئی  جنت   سے  دوزخ  کا   عذاب   اچھا  ہے

حیات حرکت و حرارت سے مرصع ہے۔ اگر حرکت رک جائے تو زندگی زندگی نہیں رہتی موت بن جاتی ہے۔ اس کی مثال ایسے ہی ہے کہ اگر حیات آور و  حیات بخش پانی کوکسی تالاب میں ٹھہرا دیا جائے تو چند یوم کے بعد یہی پانی حیات آفر یں میں ہونے کے بجائے موت آور اور آب ہلاکت انگیز بن جا تا ہے۔ اسی طرح جو افراد یا اقوام اپنے قوائے عمل میں جمود طاری کر لیتے ہیں تو ان کے اندر قوت عمل مفقود ہو جاتی ہے اور ان کے قوائے عمل میں اضمحلال پیدا ہو جاتا ہے۔

زندگانی  کی   حقیقت   کوہ   کن     کے   دل   سے  بوجھ
جوئے    شیر   و   تیشہ  و  سنگ  گراں  ہے    زندگی

اگر دینی زاویہ نگاہ سے بھی دیکھا جائے تو اسلامی تعلیمات نے محنت کرنے والے کو بہت قدر کی نگاہ سے دیکھا ہے۔ آنحضور خاتم النبیین ﷺ جب کسی مزدور ومحنت کش کو دیکھتے یا ملتے تو اسے انتہائی احترام دیتے تھے ۔ ایک دفعہ ایک محنت کش آپؐ کی خدمت میں حاضر ہوا۔ اس کے ہاتھوں پر سیاہ نشان پڑے ہوئے تھے۔ آپ خاتم النبیین ﷺ نے دریافت کیا کہ تمہارے ہاتھوں پر کیا ہوا ہے تو اس نے بتایا کہ محنت کرتے ہوئے میرے ہاتھوں پر چھالوں کے بعد گٹے پڑگئے ہیں۔ جس کی وجہ سے ہاتھوں پر کالے نشان بن گئے ہیں ۔ آپ خاتم النبیین ﷺ نے آگے بڑھ کر اس کے ہاتھ چوم لیے ۔ ایک محنت کش کے لیے یہ عزت وتعظیم کا انداز ایک عظیم شخصیت کا ہی مرہون منت ہو سکتا ہے۔

You also like:  Essay on "Problems Facing by Muslim Ummah" for LAT and USAT

ہے  قوت  بازو   میں  تیری    راز  سعادت
تو   ڈھونڈتا    پھرتا   ہے  اسے  بال ہما   میں

آنحضور خاتم النبیینﷺ سے قرآن مجید کی چلتی پھرتی تفسیر وتعبیر تھے۔ قرآن مجید کی وہ آیت ہمہ وقت پیش نظر رہتی تھی کہ انسان کے لیے وہی کچھ ہے کہ جو کچھ وہ کرتا ہے۔ آنحضور خاتم النبیین ﷺ نے زندگی کے ہر مرحلہ پر اپنے رفقا  کار کے شانہ بشانہ جدو جہد اور عمل کرو کاوش میں بھر پور کردار ادا کیا۔ مسجد نبوی کی تعمیر ہورہی ہے ۔ امام الانبیا           ٗفخر موجودات اور نبی آخر الزمان ﷺ اپنے ہاتھوں سے پتھر اٹھا اٹھا کر لاتے اور تعمیر مسجد کے لیے اپنا کردار ادا کر رہے تھے۔ اسی طرح جنگ خندق کے موقع پر کدال سے خندق کھودنے میں اپنے ساتھیوں کے ساتھ مصروف کار تھے ۔ بھوک پیاس کی شدت سے ساتھی نڈھال تھے ۔ سخت چٹائیں سد راہ تھیں جنھیں حضور خاتم النبیین ﷺ اپنی ضرب کاری سے پاش پاش کر دیتے تھے۔ آپ خاتم النبیین ﷺ  کا عمل مسعود رہتی دنیا تک محنت کشوں کی عظمت کو چار چاند لگا گیا کہ محنت میں عظمت ہے ۔ عظمت کردار کی یہ رفعتیں اور عظمت و اجلال کی کرنیں دیگر انبیائے کرام وصحابہ کرام رضی اللہ تعالی عنہم کے کردار سے بھی ملتی ہیں۔ جن کے توسط سے یہ جہان رنگ و بو محنت کشوں کو ایک خاص مقام دینے پر مجبور ہے۔ اخروی زندگی کا دارو مدار بھی عمل اور جدو جہد پر ہے۔

عمل سے  زندگی    بنتی  ہے    جنت   بھی   جہنم بھی
یہ   خاکی اپنی  فطرت   میں  نہ نوری   ہے  نہ ناری ہے

اگر ماضی کے دریچوں سےجھا تک کر دیکھیں یا تاریخ انسانی کے اوراق کی ورق گردانی کریں ۔ یہ بات اظہر من الشتمس ہوگی کہ جن اقوام و ممالک نے جدو جہد محنت و کاوش اور مسلسل تگ و  دود کی ہے۔ وہ قعر مذلت سے بام عروج تک پہنچ گئی ہیں اور جنھوں نے سستی ، تساہل اور غفلت شعاری کا مظاہرہ کیا ذلت و رسوائی ان کا مقدرٹھہری ۔ اگر تاریخ اسلام کا ہی غیر جانبدارانہ مطالعہ کیا جاۓ تو معلوم ہوتا ہے کہ مسلمان جب تک دلچسپی اور دل لگی کے ساتھ تسخیر کائنات کے علاوہ دیگر زندگی بخش علوم و فنون میں سرگرم عمل رہے تو تخت و تاج ، دولت و ثروت ، عزت و منزلت ، جاہ وحشمت ان کے گھر کی باندی رہی۔ جب غفلت شعاری، تعصبات ، انا پسندی اور تساہل انگیزی نے ان پر تسلط حاصل کر لیا تو زوال کا راستہ کون روک سکتا تھا۔ تنگ دستی ،مسکنت ، غلامی ، بیماری کے علاوہ عزت و ناموس تک رو بہ زوال ہوا۔

 اگر کوئی قوم اپنا کھویا ہوا مقام دوبارہ بحال کرنا چاہے تو اسے محنت کے راستے سے ہی عروج تک پہنچنا ہوگا۔ دنیا میں جتنے عظیم لوگ بھی گزرے ہیں۔ان کے ماضی میں جھانکنے سے معلوم ہوتا ہے کہ ان کا یہ عروج ان کی مسلسل کوشش، شبانہ روز محنت اور محنت شاقہ کا مرہون منت ہے ۔ وہ زندگی کی سنگلاخ چٹانوں پر آبلہ پا چلتے رہے۔ ہمیشہ فرہاد نے دودھ کی نہریں جاری کر دیں۔ انھوں نے اپنے عزم و ہمت سے ناممکنات کو ممکنات میں تبدیل کر دیا اور اس طرح عزم ہمت کی یہ کوہ گراں شخصیات کے نام نامی کمزور دل اور مایوس و ناامید لوگوں کے لیے مشعل راہ کا کام کرتے رہیں گے۔

بے      محنت    پیہم      کوئی  جوہر    نہیں    کھلتا
روشن   شر و   تیشہ      سے      ہے       خانہ      فرباد

Find Relevant Posts:

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x