Essay on “Environmental Pollution in Pakistan” for LAT and USAT

Do you want to know about Drugs and Our Society? You will find an Essay on “Environmental Pollution in Pakistan” for LAT and USAT examinations. In the LAT and USAT examinations, you can write essays in Urdu and English. So we have arranged both versions here.

Essay on “Environmental Pollution in Pakistan” (English Version)

Where man has beautified the environment with his scientific progress, he has also damaged the environment, which has had devastating effects on human health. The negative effects on the environment due to human activities are called environmental pollution.

Air and water are the best gift of nature and a great reward for human life. A mixture of different gases, oxygen, nitrogen and hydrogen, carbon dioxide, etc. are included in the air in a certain proportion. Human life without air is not even imagined. But if this ratio cannot be maintained and becomes less or more than a certain amount, it will not be possible for a human being to survive.

Take the example of carbon monoxide gas emitted from vehicles, if it exceeds a certain amount in the air, the death of a human being occurs immediately. Most of the deaths that occur on the roads today are an indication of this.

Similarly, drinking contaminated water is causing many stomach diseases. The noise of factories, factories, vehicles, and machines has given rise to diseases like blood pressure, depression, and mental restlessness.

As far as air pollution is concerned, the biggest and most important role has been played by the factories and factories in the cities, the harmful smoke coming out of their chimneys, in which the presence of very dangerous chemical components directly affects our health.

It is happening. The smoke coming out of the vehicles, the fire in the agricultural sector, and the dust rising from the roads have destroyed the natural proportion of clean and transparent air. This is affecting our daily life. Due to air pollution in our cities, especially lung diseases, nose and throat problems, asthma, headache, eye irritation, shortness of breath, nausea, skin diseases, etc. are increasing day by day.

Where pollution in the air has had a profound effect on our health, the natural environment has also been adversely affected by it. Or more unseasonal rains have also caused problems like floods and barrenness of lands.

The problem of water pollution is also increasing. Water, which is a mixture of oxygen and hydrogen, in which some more salts are also present in a certain amount, including sodium, potassium, calcium, etc., and which are essential for the human body.

They play an important role in development. Allah has placed a feature in water that it has the ability to dissolve almost all chemical components within itself. This is the reason that if the necessary salts are present in the natural ratio in the water, it is the best gift of nature. It is a great resource.

Eighty percent of diseases in children and adults are caused by water and are transmitted to others. Germs of various diseases enter the human body through contaminated water, including cholera, jaundice, typhoid, dysentery, and liver diseases. Included.

Why and how does water become polluted? We see that there are many factories in our cities or outside the cities from which the discharged water contains very harmful chemicals. These include tanning and dyeing factories, textile factories, and factories manufacturing various chemicals, fertilizers, pesticides, and sewage from cities.

Some of this water directly reaches our underground aquifers and some enter our rivers through streams and then when we use groundwater through tube wells or rivers for drinking purposes. If we bring in these chemical components, they affect our health badly and cause our ruin. It leaves bad effects on health and causes various diseases. Polluted water also poses a great threat to aquatic life in our rivers.

Another important problem is excessive sound and noise, which is also a part of environmental pollution. This includes loud unpleasant sounds of cars and their pressure horns etc., factories and factories in residential areas, the noise of railway vehicles, etc.

Due to these loud unpleasant sounds and noise, mental restlessness, blood pressure, depression, and sleep. Less or no coming, irritability, quickness of anger, haste in work and restlessness are taking place.

There is a need for a monthly check-up of all noisy vehicles, including rickshaws, and very old or very noisy vehicles should be banned from entering cities. The rickshaws should be locked up in the police station until the silencers are fixed. Action should be taken against the owners of vehicles that emit heavy smoke and stricter punishments should be proposed.

Campaign against pollution should be conducted at the national level. Conferences should be organized and it should be brought to people’s minds that pollution is the biggest humanitarian problem of the present time, for this purpose, mass media, radio, newspaper, TV, and journals, etc. can be taken full advantage of.

Environmental (Ecology) should be introduced as a subject in educational institutions so that future generations can avoid this dangerous end. Also, an anti-pollution movement should be conducted under the supervision of experts on a war footing in the style of a cleaning campaign and every class should be given special attention. But if the students are involved, the problem of pollution can be easily controlled.

Essay on “Environmental Pollution in Pakistan” (UrduVersion)

ماحولیاتی آلودگی

انسان نے جہاں اپنی سائنسی ترقی سے ماحول کو سنوارا  ہے وہاں ماحول کو خراب بھی کیا ہے جس سے انسانی  صحت پر تباہ کن اثرات مرتب ہوئے  ہیں ۔ انسانی سرگرمیوں کے باعث ماحول پر جو منفی اثرات ظاہر  ہوئے ہیں انہیں ماحولیاتی آلودگی کا نام دیا جاتا ہے۔

 ہوا اور پانی انسانی زندگی کے لیے قدرت کا بہترین  عطیہ اور بہت بڑا انعام ہیں۔مختلف گیسوں کا مرکب ہوا میں آکسیجن ،نائٹروجن اور ہائٹروجن ،کاربن ڈائی آکسائیڈ وغیرہ ایک خاص تناسب سے شامل ہیں ۔ہوا کے بغیر انسانی زندگی کا  تصور بھی نہیں کیا جا سکتا۔لیکن اگر یہ  تناسب برقرار نہ رہ سکے اور ایک خاص مقدار سے  کم یا زیادہ ہو جائے  تو انسان  کے لیے زندہ رہنا  ممکن نہ رہے گا۔

گاڑیوں سے نکلنے  والی   کاربن مونو آسائید گیس کی مثال ہی لے لیجیے  اگر یہ ہوا میں  خاص مقدار  سے بڑھ جائے تو انسان کی موت فوری طور پر واقع ہو جاتی ہے۔آج کل سڑکوں پر ہونے والی اکثر اموات اسی کا شاخسانہ ہیں۔

اسی طرح آلودہ پانی پینے سے  پیٹ کی بہت سی بیماریاں  تیزی سے جنم لے رہی ہیں۔ فیکٹریوں،کارخانوں،گاڑیوں اور مشینوں کے شور نے بلڈ پریشر،ڈپریشن اور ذہنی بےسکونی جیسے امراض کو جنم دیا ہے۔

جہاں تک ہوا میں آلودگی کا تعلق ہے تو اس میں سب سے بڑا اور اہم کردار  شہروں میں  موجود  کارخانوں  اور فیکٹریوں  نے ادا کیا ہے جن کی چمنیوں   سے نکلنے والا مضر صحت دھواں ،جن میں انتہائی خطرناک کیمیائی اجزا کی موجودگی  ہماری صحت پر  براہراست اثرانداز ہو رہی ہے ۔گاڑیوں سے نکلنے والا دھواں،زراعت کے شعبے میں لگی آگ ،سڑکوں سے اٹھنے والے گرد و غبار نے تو صاف و شفاف ہوا کا قدرتی تناسب تباہ و برباد کر کے رکھ دیا ہے۔

جس سے  ہماری روزمرہ زندگی متاثر ہو رہی ہے۔ہوا میں آلودگی کی وجہ سے ہمارے شہروں میں خصوصاً  پھیپھڑوں کی تمام بیماریاںناک اور گلے کی تکالیف ،دمہ،سردرد،آنکھوں کی جلن،سانس پھولنا،متلی،جلدی بیماریاں وغیرہ  روز بروز بڑھتی جا رہی ہیں۔

ہوا میں آلودگی نے جہاں ہماری  صحت پر گہرے اثرات مرتب کیے ہیں وہاں قدرتی ماحول بھی اس سے بری طرح متاثر ہوا ہے۔روزبروزبڑھتی ہوئی گرمی نے جہاں انسان کا جینا دوبھر کیا ہوا ہے  وہاں پانی  کے ٹمپریچر   نے،موسموں میں تبدیلی نے ضرورت سے کم یا زیادہ بے موسمی بارشیں سیلاب اور زمینوں کے بنجر پن جیسے مسائل سے بھی دوچار کیا ہے۔

پانی میں آلودگی کا مسئلہ بھی شدت اختیار کرتا جا رہا ہے۔پانی جو کہ آکسیجن اور ہائیڈروجن کا مرکب ہے جس میں کچھ مزید نمکیات بھی ایک خاص مقدار میں موجود ہوتے ہیں جن میں سوڈیم،پوٹاشیم،کیلشیم وغیرہ شامل ہیں اور جو انسانی جسم کی نشونما میں اہم کردار ادا کرتے ہیں ۔پانی میں اللہ تعالیؑ ْ نے ایک خصوصیت رکھی ہے کہ یہ تقریباً تمام کیمیائی اجزا کو اپنے اندر احل کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے ۔

یہی وجہ ہے کہ پانی میں اگر ضروری نمکیات قدرتی تناسب میں موجود ہیں تو قدرت کا بہترین عطیہ ہیں۔لیکن اگر ان نمکیات کی مقدار  ایک خاص تناسب سے کم یا بڑھ جائے  یا مضر صحت کیمیائی اجزا پانی میں شامل ہو جائیں تو یہ بیماریوں کا بہت بڑاذریعہ ہے۔ بچوں اور بڑوں میں اسی فیصد بیماریاں پانی کے ذریعے  ہی پیدا ہوتی ہیں اور دوسروں میں منتقل ہوتی ہیں ۔آلودگی  پانی کے ذریعے مختلف بیماریوں کے جراثیم  انسانی جسم میں داخل ہو جاتے ہیں۔جن میں ہیضہ،یرقان،ٹائیفائیڈ،پیچش اور جگر کی بیماریاں شامل ہیں۔

پانی آلودہ کیوں  اور کیسے  ہو جاتا   ہے ۔ ہم دیکھتے ہیں کہ ہمارے شہروں میں یاشہروں سے باہر بہت سے ایسے کارخانے ہیں  جن سے خارج ہونے والے  پانی میں نہایت  مضر صحت کیمیائی مادے شامل ہوتے  ہیں ۔ ان میں چمڑے کو صاف کرنے اور  رنگنے کے کارخانے،ٹیکسٹائل کی فیکٹریاں، مختلف کیمیکلز تیار کرنے کے کارخانے،کھاد فرٹیلائزر کیڑے مار ادویات اور شہروں سے سیورج کا گندہ  پانی شامل ہیں۔

اس پانی کا کچھ حصہ تو براہ راست ہمارے زیر  زمین آبی  ذخائر میں   پہنچ جاتا  ہے اور کچھ ندی   نالوں کے ذریعے ہمارے دریاوٗں  میں شامل ہو جاتا ہے اور پھر جب ہم زیر زمین پانی کو ٹیوب ویلوں  کے ذریعے یا دریاوٗں کے پانی کو پینے کے استعمال میں لاتے ہیں  تو یہی کیمیائی اجزا ہماری  صحت پر بری طرح اثر  انداز ہو کر ہماری بربادی کا سبب بنتے ہیں ۔

اسی  پانی کاکچھ حصہ ہم کاشتکاری کے لیے بھی استعمال کرتے ہیں  جو پھر مختلف اجناس ،سبزیوں وغیرہ پر بھی اثر انداز ہوتا ہے اور ہمارے صحت پر برے  اثرات چھوڑتا ہے اور مختلف بیماریوں  کا سبب بنتا ہے ۔ آلودہ پانی  ہمارے   دریاوٗں میں موجود آبی جانوروں کے لیے  بھی زبردست خطرے کا باعث ہے۔

ایک اور اہم مسئلہ  بہت زیادہ تیز آواز اور شور کا ہے یہ بھی ماحولیاتی آلودگی  ہی کا حصہ ہے۔ اس میں گاڑیوں اور ان میں لگے پریشر ہارن وغیرہ کی تیز ناگوار آوازیں رہائشی علاقوں میں لگی  فیکٹریاں اور کارخانے ریل گاڑیوں کا شور وغیرہ شامل ہیں۔ان تیز ناگوار قسم کی  آوازوں اور شور کی وجہ سے ذہنی بے سکونی بلڈ پریشر،ڈپریشن،نیند کا کم یا نہ آنا،چڑچڑاپن ، غصے کا جلدی آنا، کام میں جلدی کا اظہار اور طبیعت کی بے چینی جیسے امراض جنم لے رہے ہیں۔

ضرورت اس امر کی ہے کہ رکشوں سمیت تمام شور دینے والی گاڑیوں کا ماہانہ چیک اپ کروایا جائے اور بہت پرانی یا بہت زیادہ شور دینے والی گاڑیوں  کا  شہروں میں داخلہ ممنوع قرار دیا جائے۔ رکشوں کے سائلنسر ٹھیک کروانے تک انہیں تھانے میں بند کیا جائے بہت زیادہ دھواں دینے والی  گاڑیوں کے مالکان کے خلاف قانون کے تحت کاروائی کی جائے اور سخت سے سخت سزائیں تجویز کی جائیں۔

آلودگی کے خلاف قومی سطح  پر مہم چلائی جائے ۔ کانفرنسیں منعقد کی جائیں اور لوگوں کے ذہنوں میں یہ بات لائی جائے کہ آلودگی دور حاضر کا سب سے بڑا انسانیت کش مسئلہ ہے اس مقصد کے لیے ابلاغ عامہ ،ریڈیو،اخبار،ٹی وی اور جرائد وغیرہ سے بھر پور فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے۔

تعلیمی اداروں میں ماحولیاتی      (ایکالوجی)کو بطور مضمون متعارف کرایا جائے تا کہ آئندو نسلیں اس خطرناک انجام سے بچ سکیں۔بھل صفائی مہم کی طرز پر جنگی بنیادوں پر ماہرین کی زیر نگرانی ( اینٹی پولیوشن تحریک ) چلائی جائے اور ہر طبقے کو خاص طور پر طلبہ کو شریک کار کر لیا جائے تو آلودگی کے مسئلے پر آسانی کے ساتھ قابو پایا جا سکتا ہے

Find Relevant Posts:

Subscribe
Notify of
guest

0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x